امریکا میں کورونا وائرس سے ایک ہی روز تقریباً دو ہزار افراد موت کی وادی میں چلے گئے

92 نیوز  |  Apr 08, 2020

 واشنگٹن (92 نیوز) امریکا میں کورونا وائرس نے  قیامت صغریٰ برپا کر دی۔ ایک ہی روز تقریباً دو ہزار افراد موت کی وادی میں چلے گئے ۔

سپر پاور امریکا، کورونا وائرس کے سامنے بے بس ہے۔ امریکا میں ہر گزرتے دن کے ساتھ شرح اموات میں ہوشربا اضافہ ہونے لگا۔ صرف ریاست نیویارک میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں  کے دوران ریکارڈ سات سو اکتیس ہلاکتیں رپورٹ ہوئیں۔ اسپتال  کورونا کے مریضوں سے بھرے پڑے ہیں جنہیں بچانے کیلئے ڈاکٹرز اور دیگر طبی عملہ دن رات کوشاں ہیں ۔ سرد خانوں میں لاشیں رکھنے کی بھی گنجائش نہیں  جس کے باعث تدفین بہت بڑا مسئلہ بن گئی ہے ۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنی توپوں کا رخ عالمی ادارہ صحت کی طرف موڑ دیا۔ میڈیا بریفنگ کے دوران  ٹرمپ  کا کہنا تھا کہ ادارے کو سب سے زیادہ فنڈ امریکا دیتا ہے لیکن اس کا جھکاؤ چین کی طرف ہے، اب ہم اس پر نظرِثانی کریں گے۔

امریکی صدر نے  عالمی ادارہ صحت پر وائرس کا پھیلاؤ روکنے کیلئے بروقت ایکشن نہ لینے کا الزام بھی عائد کیا۔

صرف نیویارک میں 731 ہلاک ، نیوجرسی، مشی گن، جارجیا میں بھی سیکڑوں اموات واقع ہوئیں۔ امریکا میں مجموعی ہلاکتیں ساڑھے بارہ ہزار سے زائد ہو گئیں، متاثرین چار لاکھ تک جا پہنچے۔ فرانس میں مزید 1417، برطانیہ میں 786، اسپین میں 704 اور اٹلی میں 604 مریضوں نے دم توڑا۔ دنیا بھر میں اموات بیاسی ہزار اور مریض چودہ لاکھ 30 ہزار سے تجاوز کر گئے۔

دوسری جانب  امریکا کے قائم مقام نیوی سیکرٹری تھامس موڈلی نے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ موڈلی نے کورونا وائرس سے متاثرہ امریکی بحری بیڑے کے برطرف کپتان بریٹ کروزیئر کو بے وقوف کہا تھا۔

کپتان بریٹ کروزئر نے بحری بیڑے پر کورونا وائرس کی وبا پھوٹنے سے متعلق خط لکھا تھا جس میں انہوں نے پینٹاگون سے فوری مدد کی اپیل کی تھی ۔ خط لیک ہونے پر انہیں پانچ روز قبل ہی عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More