فرانس کے خلاف قرارداد کے لیے قومی اسمبلی کا اجلاس شروع، پیپلزپارٹی کی عدم شرکت

وائس آف امریکہ اردو  |  Apr 20, 2021

ویب ڈیسک — 

پاکستان کی قومی اسمبلی کے سیکریٹریٹ نے جمعرات کو ہونے والا اجلاس ری شیڈول کر دیا ہے جب کہ ​وفاقی وزیرِ داخلہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کی قرارداد منگل کو ہی قومی اسمبلی میں پیش کی جائے گی۔

پاکستان کی قومی اسمبلی کا اجلاس جمعرات کو شیڈول تھا۔ تاہم اسے منگل کی سہ پہر تین بجے ری شیڈول کیا گیا۔

منگل کو قومی اسمبلی میں نجی کارروائی کا دن ہے جس کے دوران فرانسیسی سفیر کی بے دخلی سے متعلق قرارداد پیش کیے جانے کا امکان ہے۔

مقامی میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) نے اجلاس میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

سوشل میڈیا پر پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ کسی بھی سطح پر پارلیمان کو اعتماد میں نہیں لیا گیا۔ اب پی ٹی آئی پارلیمان کے پیچھے چھپنا چاہتی ہے۔ انہوں نے عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وزیرِ اعظم یہ آپ کا پھیلایا ہوا گند ہے۔ خود صاف کریں یا گھر جائیں۔

اسپیکر اسد قیصر کی زیرِ صدارت قومی اسمبلی کا اجلاس پیر کو بھی ہوا تھا جس کے دوران کالعدم ٹی ایل پی کے خلاف کریک ڈاؤن کے معاملے پر بحث کے دوران ہنگامہ آرائی کے بعد اسے جمعرات تک کے لیے ملتوی کر دیا گیا تھا۔

قومی اسمبلی کا اجلاس ایسے موقع پر ری شیڈول کیا گیا ہے جب وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید نے منگل کی صبح جاری اپنے ایک ویڈیو بیان میں کہا ہے کہ حکومت اور کالعدم تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے درمیان مذاکرات کے بعد معاملات طے پا گئے ہیں۔

شیخ رشید نے دعویٰ کیا ہے کہ کالعدم ٹی ایل پی ملک بھر سے دھرنوں کو ختم کرے گی اور خاص طور پر لاہور کی مسجد رحمت للعالمین سے بھی دھرنا ختم ہو گا جس کے بعد حکومت اور مذکورہ تنظیم کے درمیان بات چیت و مذاکرات کا سلسلہ آگے بڑھایا جائے گا۔

وزیرِ داخلہ کے مطابق کالعدم ٹی ایل پی کے جن لوگوں کے خلاف مقدمات درج ہیں انہیں خارج کر دیا جائے گا اور ان خارج ہونے والے مقدمات میں فورتھ شیڈول مقدمات بھی شامل ہوں گے۔

شیخ رشید کا مزید کہنا تھا کہ وہ کالعدم ٹی ایل پی سے ہونے والے مذاکرات کی مزید تفصیلات منگل کی شام یا بدھ کو پریس کانفرنس کے دوران بتائیں گے۔

اِس سے قبل حکومتی ٹیم نے کالعدم ٹی ایل پی کے امیر سعد حسین رضوی کے ساتھ طویل مذاکرات کیے تھے۔

یاد رہے کہ سعد رضوی اس وقت حراست میں ہیں۔ ان سے ملاقات کرنے والی حکومتی مذاکراتی ٹیم میں وفاقی وزیرِ داخلہ شیخ رشید، وفاقی وزیرِ مذہبی امور نورالحق قادری، گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور اور وزیرِ قانون پنجاب راجہ محمد بشارت شامل تھے۔

حکومتی ٹیم سے قبل پنجاب قرآن بورڈ کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا کی سربراہی میں علما کے ایک وفد نے بھی کوٹ لکھ پت جیل میں سعد رضوی سے ملاقات کی تھی۔

جیل ذرائع کے مطابق یہ ملاقات پانچ گھنٹے طویل تھی جس میں علما نے سعد رضوی کو دھرنا ختم کرنے کی اپیل کی تھی۔

یتیم خانہ کے اطراف کنٹینرز لگا دیے گئے

پنجاب پولیس اور لاہور انتظامیہ نے ٹی ایل پی کے کارکنوں کو جماعت کے مرکزی دفتر یتیم خانہ چوک کے علاقے تک محدود رکھنے کے لیے اطراف کے علاقوں میں کنٹینرز لگا دیے ہیں۔

ٹی ایل پی کے احتجاجی دھرنے کے باعث ملتان روڈ پر یتیم خانہ چوک کے اطراف تمام کاروباری مراکز بند ہیں۔

سی سی پی او لاہور کے ترجمان انسپکٹر رانا عارف کے مطابق پولیس کو پوری اُمید ہے حکومتی ٹیم کے ساتھ مذاکرات کے بعد ٹی ایل پی کے کارکن یتیم خانہ سے اسلام آباد کی طرف یا کسی اور طرف مارچ نہیں کریں گے۔

وائس آف امریکہ سے بات کرتے ہوئے ترجمان نے بتایا کہ انتظامیہ نے احتیاطی طور پر شیرا کوٹ، اسکیم موڑ اور موڑ سمن آباد کی طرف کنٹینر لگا دیے ہیں اور ان علاقوں کی طرف جانے والے ہر قسم کی ٹریفک کو بند کر دیا گیا ہے۔

وفاقی وزیرِ داخلہ کا فرانسیسی سفیر کی ملک بدری سے متعلق قرارداد اسمبلی میں لانے کا بیان ایسے موقع پر آیا ہے جب پیر کو ہی وزیرِ اعظم عمران خان نے قوم سے اپنے مختصر خطاب میں کہا تھا کہ فرانس سے تعلقات ختم کرنے اور سفیر کو بے دخل کرنے سے پاکستان کو ہی معاشی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔

یاد رہے کہ فرانس میں گزشتہ برس پیغمبرِ اسلام کے توہین آمیز خاکوں کے خلاف تحریک لبیک پاکستان کی جانب سے ملک بھر میں بھرپور احتجاج کیا گیا۔ مظاہرین نے اسلام آباد میں دھرنا بھی دیا اور فرانسیسی سفیر کی ملک بدری اور فرانس کی اشیا کے بائیکاٹ کا مطالبہ کیا۔

بعدازاں حکومت اور مظاہرین کے درمیان ایک معاہدہ ہوا جس میں حکومت نے پارلیمنٹ کے ذریعے فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کی یقین دہانی کرائی۔

SEE ALSO:ٹی ایل پی اور میرا مقصد ایک، لیکن سفیر واپس بھیجنا مسئلے کا حل نہیں: عمران خان

کالعدم ٹی ایل پی کا احتجاج ایک مرتبہ پھر اس وقت خبروں کی زینت بنا جب تنظیم کے امیر مولانا سعد رضوی نے حکومت سے ہونے والے معاہدے پر عمل درآمد نہ ہونے کے خلاف لاہور سے اسلام آباد کی جانب مارچ کی دھمکی دی جس پر حکومت نے 12 اپریل کو انہیں حراست میں لے لیا۔

سعد رضوی کی گرفتاری کے خلاف ملک کے مختلف شہروں میں ان کی تنظیم کے کارکنوں نے دھرنے دینا شروع کیے اور فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کے مطالبات دہرائے۔

پیر کو قوم سے خطاب کے دوران وزیرِ اعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پیغمبرِ اسلام کی توہین کے معاملے پر کالعدم ٹی ایل پی اور حکومت کا مقصد ایک ہی ہے تاہم فرانسیسی سفیر کو واپس بھیجنا مسئلے کا حل نہیں۔

وزیرِ اعظم نے الزام عائد کیا تھا کہ حزبِ اختلاف کی جماعتیں مسلم لیگ (ن) اور جمعیت علمائے اسلام (ف) ملک میں انتشار پھیلانے کے لیے کالعدم ٹی ایل پی کا ساتھ دے رہی ہیں جب کہ مظاہروں کے دوران سوشل میڈیا پر جھوٹی خبریں چلتی رہیں اور چار لاکھ ٹوئٹس میں سے 70 فی صد فیک اکاؤنٹس سے کی گئی تھیں جن میں بھارتی اکاؤنٹس بھی شامل تھے جو پاکستان میں خانہ جنگی کے ٹرینڈز چلا رہے تھے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More