فلم ’سٹل واٹر‘ پر امینڈا نوکس حفا کیوں ہیں؟

وائس آف امریکہ اردو  |  Jul 31, 2021

ویب ڈیسک — امریکی شہری امینڈا نوکس نے ہالی وڈ کی فلم ’سٹل واٹر‘ کے ساتھ ان کا نام جوڑنے پر نکتہ چینی کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ کسی بھی قسم کا تعلق، ان کی کہانی کو ان کی مرضی کے بغیر استعمال کرنے کی کوشش ہے جس میں ساری بدنامی انہی کی ہو گی۔

خبر رساں ادارے، ایسوسی ایٹڈ پریس (اے پی) کے مطابق فلم ’سٹل واٹر‘ میں معروف اداکار میٹ ڈیمن ایک ایسے باپ کا کردار ادا کر رہے ہیں جو فرانس جا کر اپنی بیٹی کا مقدمہ لڑتے ہیں، جو فرانس کے شہر مارسیل میں اپنی گرل فرینڈ کے قتل کی سزا کاٹ رہے ہیں۔ فلم میں اس کیس کو میڈیا میں ہائی پروفائل دکھایا گیا ہے۔ امینڈا نوکس کا نام اس فلم میں کہیں استعمال نہیں کیا گیا، مگر فلم سازوں نے مختلف انٹرویوز میں یہ کہا تھا کہ اس فلم کے بنانے کا خیال انہیں امینڈا نوکس کی کہانی کو دیکھ کر آیا تھا۔

امینڈا نوکس کون ہیں؟امینڈا نوکس کا نام 2007 میں اس وقت عالمی میڈیا کی ہیڈلائینز کا موضوع بنا جب اٹلی کے شہر پیرگویا میں ایک برطانوی شہری میریٹیتھ کرچر کا قتل ان کے کمرے میں ہوا۔

پولیس نے امینڈا اور ان کے اس وقت کے بوائے فرینڈ پر شک کا اظہار کیا تھا۔ دونوں کو ابتدا میں اس کیس میں سزا ہو گئی تھی۔ لیکن بعد میں اٹلی کی سب سے بڑی عدالت نے 2015 میں ان کی سزا ختم کر دی تھی۔

SEE ALSO:افغان جنگ کے موضوع پر بننے والی ہالی وڈ کی 10 بڑی فلمیںامینڈا نوکس نے ٹوئٹر پر متعدد ٹویٹس اور ویب سائٹ میڈیم میں ایک بلاگ میں متعدد آن لائن ویب سائٹس اور فلم کے ڈائریکٹر ٹام میکارتھی کی جانب سے فلم کی پروموشن میں ان کا نام استعمال کرنے پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی کہانی کی افسانوی صورت بھی کسی ایسی سازشی کہانی کی طرح ہے جس میں انہیں مجرم ٹہرایا گیا ہو۔

انہوں نے لکھا کہ ’’کیا میرا نام میری ملکیت ہے؟ کیا میرا چہرہ میری ملکیت ہے؟ میری زندگی کے بارے میں کیا کہا جائے گا؟ میری کہانی؟ ایسا کیوں ہے کہ جن واقعات کے پیچھے میرا ہاتھ نہیں تھا، انہیں یاد کرنے کے لیے میرا نام استعمال کیا جاتا ہے؟‘‘

انہوں نے کہا کہ وہ یہ باتیں اس لیے کر رہی ہیں کہ اب بھی لوگ ان کی مرضی کے بغیر ان کے نام، چہرے اور کہانی سے فائدہ اٹھا رہے ہیں۔

انہوں نے مزید لکھا کہ ’’میری معصومیت پر افسانہ طرازی کرنا، جس میں مجھ سے واقعات کے متعلق بالکل بھی نہ پوچھا گیا ہو، میری غلط سزا پر حکام کے کردار کو مٹاتے ہوئے ٹام مکارتھی نے میرا ایسا چہرہ دکھایا ہے جو نہ صرف مجرم ہے بلکہ اعتبار کے لائق بھی نہیں ہے۔‘‘

انہوں نے کہا کہ اسی وجہ سے اس سکینڈل کو لوگ ابھی تک ’’لوینسکی سکینڈل‘‘ کے نام سے جانتے ہیں، جب کہ اس طرح پکارنے سے ہم یہ بھول جاتے ہیں کہ اس تعلق میں کس کے پاس زیادہ طاقت تھی، کون ان واقعات میں زیادہ آزادی سے فیصلے لے سکتا تھا۔

ٹوئٹر پر ان کی ٹویٹ کو اب تک ساڑھے 14 ہزار افراد نے ری ٹویٹ کیا ہے اور 65 ہزار افراد نے اسے لائیک کیا ہے۔

ان کے ٹوئٹر تھریڈ، یعنی ٹویٹس کے سلسلے کے جواب میں لوگ جہاں ان سے اظہار یکجہتی کر رہے ہیں، وہیں فلم 'سٹل واٹر' نہ دیکھنے کا بھی لکھ رہے ہیں۔

صحافی جوش سٹین برگ نے لکھا کہ یہ ٹویٹس کا سلسلہ بہت اہم ہے جو ان الفاظ پر روشنی ڈالتا ہے جو رپورٹر استعمال کرتے ہیں، اور ان طریقوں کو واضح کرتا ہے جن کے ذریعے فلمیں ان لوگوں کو اپنی کہانی میں دکھاتی ہیں، اور اس کا ان کی زندگی پر گہرا اثر پڑتا ہے۔ جب کہ ان کا اس میں کوئی کردار بھی نہیں تھا کہ انہیں کیسے دکھایا جا رہا ہے۔

اے پی کے مطابق پچھلے ماہ 'کانز فلم فیسٹیول' میں فلم کی رونمائی کے دوران ٹام میکارتھی نے کہا تھا کہ امینڈا نوکس کا کیس اس فلم کے ابتدائی خیال میں معاون تھا، لیکن، بقول ان کے، اس سے زیادہ اس فلم کا ان کے کیس سے تعلق نہیں۔ انہوں نے کہا تھا کہ انہیں خیال آیا تھا کہ اگر ان کی اپنی بیٹی کے ساتھ ایسا ہوتا تو انہیں کیسا محسوس ہوتا؟

SEE ALSO:خواتین کا اپنی مرضی کا لباس پہننے کا حق، جرمن جمناسٹک ٹیم کی فل باڈی لباس میں شرکتاے پی کو ایک انٹرویو میں فلم کی لیڈ اداکارہ ایبیگل بریسلن نے کہا تھا کہ اگرچہ یہ کردار کچھ حد تک امینڈا نوکس کے واقعات سے مماثل ہے، لیکن انہوں نے کوشش کی ہے کہ وہ نئے سرے سے کردار ادا کریں۔

بقول اے پی کے فلم ’سٹل واٹر‘ کے ریویوز کے طور پر بہت سے رسالوں اور اخبارں میں شائع ہونے والے مضامین میں امینڈا نوکس کا حوالہ دیا گیا ہے۔ ان میں ایسوسی ایٹڈ پریس بھی شامل ہے۔ یہ فلم جمعہ کے روز امریکہ میں ریلیز ہو رہی ہے۔

اے پی کے مطابق اس فلم کو ریلیز کرنے والا سٹوڈیو فوکس فیتھرز نے جمعے کے روز تک ایجنسی کی جانب سے بذریعہ ای میل سوالات کا جواب نہیں دیا تھا۔

[​اس رپورٹ کے بنانے میں ایسوسی ایٹڈ پریس سے مواد لیا گیا]۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More