غیرملکیوں (افغان باشندوں) کو پناہ دینے والوں کیخلاف کارروائی کافیصلہ

سماء نیوز  |  Sep 15, 2021

فوٹو: اے ایف پی

صوبائی انتظامیہ نے غیرقانونی طریقے سے بلوچستان میں داخل ہونیوالے غیر ملکی (افغان) باشندوں اور انہیں پناہ دینے والوں کیخلاف کارروائی کا فیصلہ کیا ہے۔

 وزیراعظم عمران خان نے سی این این کو دیئے گئے انٹرویو میں افغانستان کی تازہ صورتحال کو پریشان کن قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان عالمی سطح پر خود کو تسلیم کرانا چاہتے ہیں، عالمی برادری نے مدد نہ کی تو انتشار کا خدشہ ہے، اگر صورتحال پر توجہ نہ دی گئی تو انسانی بحران پیدا ہوسکتا ہے۔

دی انڈیپینڈنٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا تھا کہ پاکستان پناہ گزین کیمپوں اور مہاجرین کی آبادکاری کی اجازت نہیں دے گا، طالبان حکومت کو الگ تھگ کرنے سے انسانی بحران جنم لے گا، لاقانوننيت پھيلے گی، افغانستان انتشار کا شکار ہوگا۔

ان کا کہنا تھا کہ برطانیہ کو افغانستان میں نئی حقیقت کو قبول کرنا چاہئے، انسانی بحران سے بچنے کیلئے برطانیہ اور مغربی اتحاد کام نہیں کررہا۔ شاہ محمود قریشی نے مغربی ممالک سے بغیر سیاسی شرائط کے طالبان حکومت کو سامان فراہم کرنے کا مطالبہ بھی کیا تھا۔

ایک رپورٹ کے مطابق آج (بدھ کو) چیف سیکریٹری بلوچستان مطہر نیاز رانا کی زیر صدارت ایک اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا، جس میں صوبے میں امن وامان کی مجموعی صورتحال بالخصوص غیرملکی (افغان) باشندوں کی غیرقانونی طریقے سے آمد، داخلی راستوں پر کڑی چیکنگ سمیت دیگر اہم امور کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔

چیف سیکریٹری بلوچستان نے امن وامان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کیلئے قانون نافذ کرنیوالے اداروں کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ صوبے میں غیرقانونی طریقے سے آئے ہوئے لوگوں کیخلاف کاروائی کی جائے۔

مزید جانیے: افغان خواتین فٹبالرز کی اہل خانہ کے ہمراہ پاکستان آمداجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ غیر ملکی باشندوں کو پناہ دینے والوں کیخلاف کاروائی عمل لائی جائے گی۔ چیف سیکریٹری نے صوبے کے تمام داخلی راستوں پر کڑی نظر رکھنے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ غیرقانونی طور پر صوبے میں داخل ہونیوالے غیر ملکی (افغان) باشندوں کیخلاف فارن ایکٹ کے تحت کارروائی عمل میں لائی جائے۔

اجلاس میں آئی جی پولیس محمد طاہر رائے، جوائنٹ ڈائریکٹر جنرل آئی بی دوست علی بلوچ، بریگیڈیئر عابد، اسپیشل سیکریٹری داخلہ، کمشنر کوئٹہ ڈویژن سمیت قانون نافذ کرنیوالے اداروں کے نمائندوں نے شرکت کی۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More