جام کمال کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش، رائے شماری 25 اکتوبر کو ہوگی

اردو نیوز  |  Oct 20, 2021

بلوچستان اسمبلی میں وزیراعلیٰ جام کمال خان کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کر دی گئی۔ 65 رکنی ایوان میں 33 ارکان نے کھڑے ہو کر قرارداد پیش کرنے کی اجازت دینے کے حق میں ووٹ دیا۔

بلوچستان اسمبلی کے قواعدوانضباط کار 1974 کے مطابق قرارداد پر تین دن کے بعد اور سات دن سے پہلے ووٹنگ کرائی جاتی ہے۔

سپیکر بلوچستان اسمبلی عبدالقدوس بزنجو نے کہا ہے کہ ’عدم اعتماد کی قرارداد پر 25 اکتوبر بروز پیر صبح 11 بجے رائے شماری ہوگی۔‘

اس سے قبل بدھ کے روز وزیراعلیٰ جام کمال خان کے خلاف عدم اعتماد کی قرارداد بلوچستان عوامی پارٹی کے ناراض گروپ کے رہنما سابق صوبائی وزیر سردار عبدالرحمان کھیتران نے بدھ کے روز پیش کی۔

بلوچستان عوامی پارٹی کے ناراض اراکین، بی این پی اور اپوزیشن کی جماعتوں جمعیت علمائے اسلام اور بلوچستان نیشنل پارٹی کے ارکان نے کھڑے ہو کر قرارداد پیش کرنے کی اجازت دینے کے حق میں ووٹ دیا۔

جام کمال کی اتحادی جماعت اے این پی کے انجینئر زمرک اچکزئی نے اعتراض اٹھایا کہ بلوچستان اسمبلی کے قواعدوانضباط کار کے مطابق جن محرکین نے قرارداد پیش کی ہے، ان کا اسمبلی میں پیش ہو کر قرارداد کے حق میں سامنے آنا ضروری ہے تاہم سپیکر عبدالقدوس بزنجو نے ان کا اعتراض مسترد کیا اور کہا کہ قواعد و انضباط کار 1974 کی شق 19کے تحت قرارداد پیش کرنے کے لیے صرف ایک محرک بھی کافی ہے۔ قرارداد پیش کرنے کے لیے 20 فیصد ارکان کی اجازت ضروری ہوتی ہے۔

قرارداد پیش کرنے کے بعد سردار عبدالرحمان کھیتران نے دعویٰ کیا کہ ہمارے پانچ ارکان اسمبلی لاپتا ہیں، زور زبردستی اقتدار نہیں کیا جا سکتا، لاپتا ارکان کو فوری بازیاب کرایا جائے۔ان کا کہنا تھا کہ اصولاً فیصلہ ہو گیا ہے، ایوان کا ایک شخص پر اعتماد اٹھ گیا ہے، اب جام کمال کو فوری پیچھے ہٹ جانا چاہیے۔ اس میں ان کی بھی عزت ہے اور ہماری بھی عزت ہے۔

اپوزیشن لیڈر ملک سکندر ایڈووکیٹ نے بھی عبدالرحمان کھیتران کے دعوے کی تائید کی کہ پانچ ارکان اسمبلی لاپتا اور زیر حراست ہیں، انہیں فوری طور پر رہا کیا جائے ورنہ سخت احتجاج کیا جائے گا۔

اسمبلی اجلاس میں اس وقت دلچسپ صورت حال پیدا ہو گئی جب لاپتا قرار دیے گئے ارکان میں سے ایک لالہ رشید اجلاس میں شرکت کے لیے پہنچے۔ اس پر انجینئر زمرک اچکزئی نے کہا کہ ارکان کو لاپتا کرانے کا الزام لگانے والے اب کیا کہیں گے؟ ان کا الزام غلط ثابت ہو گیا۔

اسمبلی اجلاس سے قبل ناراض گروپ اور اپوزیشن رہنماؤں نے دعویٰ کیا تھا کہ انہیں 42 ارکان کی حمایت حاصل ہے۔ بلوچستان عوامی پارٹی کے نور محمد دمڑ اور بی این پی عوامی کے منحرف رکن سید احسان شاہ نے بھی ناراض گروپ کی حمایت کا اعلان کیا۔

اسمبلی اجلاس سے قبل وزیراعلٰی جام کمال خان نے اتحادی جماعتوں کے رہنماؤں کے ہمراہ میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’ہم پر امید ہے ان شاء اللہ جیت ہماری ہو گی۔‘ ان کا کہنا ہے کہ ’کھانے کی دعوتوں میں شرکت علیحدہ بات ہے، اصل صورت حال عدم اعتماد کی قرارداد پر ووٹنگ کے دن سامنے آئے گی۔‘

قرارداد کا متناپوزیشن لیڈر ملک سکندر ایڈووکیٹ نے بھی عبدالرحمان کھیتران کے دعوے کی تائید کی کہ پانچ ارکان اسمبلی لاپتا اور زیر حراست ہیں.(فائل فوٹو: ٹوئٹر)قرارداد کے متن میں کہا گیا ہے کہ گذشتہ تین برسوں کے دوران جام کمال خان کی خراب حکمرانی کے باعث بلوچستان میں شدید مایوسی، بدامنی، بے روزگاری اور اداروں کی کارکردگی بری طرح متاثر ہوئی ہے۔ وزیراعلٰی جام کمال اقتدار پر براجمان ہو کر خود کو عقل کل سمجھ کر صوبے کے تمام اہم معاملات کو مشاورت کے بغیر ذاتی طور پر چلا رہے ہیں جس سے صوبے کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا گیا جبکہ اس بارے میں انہیں کابینہ اراکین وقتاً فوقتاً آگاہ بھی کرتے رہے لیکن انہوں نے اس جانب کوئی توجہ نہ دی۔

قرارداد کے متن میں مزید کہا گیا کہ بلوچستان کے حقوق کے حوالے سے وزیراعلٰی جام کمال نے وفاقی حکومت کے ساتھ آئینی اور بنیادی حقوق کے مسائل پر انتہائی غیر سنجیدگی کا ثبوت دیا ہے جس سے صوبہ میں بجلی، گیس، پانی اور شدید معاشی بحران پیدا ہوا۔ اس وقت صوبے کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد بیوروکریٹس، ڈاکٹرز اور طلبہ حکومت کی بیڈ گورننس کی وجہ سے سراپا احتجاج ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More