پریانتھا اردو پڑھنا اور لکھنا بالکل نہیں جانتے تھے، ملک عدنان

بول نیوز  |  Dec 05, 2021

سانحہ سیالکوٹ میں سری لنکن شہری پریانتھا کی جان پچانے کی کوشش کرنے والے ملک عدنان کا کہنا ہے کہ پریانتھا اردو پڑھنا اور لکھنا بالکل نہیں جانتے تھے.

ملک عدنان نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ پریانتھا ایماندار اور ڈیوٹی کے لحاظ سے سخت تھے، ہم میٹنگ کر رہے تھے کہ شور اٹھنے پر میں باہر گیا، مجھے معلوم ہوا کہ انہوں نے کسی کو ڈانٹا ہے۔

ملک عدنان نے کہا کہ جب میں وہاں پہنچا تو دیکھا چالیس پچاس افراد ان کی جانب اوپر آرہے ہیں، میں پریانتھا کو بچانے کے لئے اوپر بھاگا، میرے پہنچنے سے پہلے ہی پریانتھا کے سر اور منہ پر چوٹیں لگی تھیں، میں وہاں پہنچ کر پریانتھا کے اوپر لیٹ گیا، میں بھی تشدد کا شکار ہوا۔

ملک عدنان کا کہنا تھا کہ پریانتھا کمپنی کے رولز کو فالو کرتے تھے، فیکٹری میں اکثر پوسٹر لگے ہوتے ہیں، صفائی کے لئے اتارے بھی جاتے ہیں، پریانتھا اردو پڑھنا اور لکھنا بالکل نہیں جانتے تھے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ پریانتھا پر حملے کے لئے کچھ ساتھ کی فیکٹریوں اور مقامی لوگ فیکٹری کے دروازے توڑ کر اندر داخل ہوئے، انہیں بچانے کے لئے میں نے بہت منت سماجت کی، افسوس ہے کہ میں پریانتھا کی جان نہیں بچا سکا۔

ملک عدنان نے کہا کہ میں پوری قوم اور حکومت کا شکر گزار ہوں۔ ملک کی خاطر جان قربان کرنے کو تیار ہیں۔

خیال رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے ملک عدنان کو تمغہ شجاعت دینے کا اعلان کیا ہے۔

ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں وزیراعظم نے کہا کہ ملک عدنان کی بہادری اور شجاعت کو سلام پیش کرتے ہیں، ملک عدنان نے مشتعل ہجوم سے سری لنکن مینیجر کو بچانے کیلئے اپنی زندگی خطرے میں ڈالی۔

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More