راولپنڈی ٹیسٹ: دوسری اننگز میں بھی انگلینڈ کی جارحانہ بلے بازی

اردو نیوز  |  Dec 04, 2022

پاکستان اور انگلینڈ کے مابین تین ٹیسٹ میچز کی سیریز کے پہلے ٹیسٹ میچ کے چوتھے روز انگلینڈ کی دوسری اننگز جاری ہے۔ 

اتوار کو کھانے کے وقفے تک انگلینڈ نے اپنی دوسری اننگز میں چار وکٹوں کے نقصان پر 192 رنز بنائے تھے اور اس طرح انگلینڈ کو 270 سے زائد رنز کی برتری حاصل ہوگئی ہے۔ 

دوسری اننگز کے آغاز میں انگلینڈ کو پہلا نقصان اٹھانا پڑا جب نسیم شاہ نے بین ڈکٹ کو صفر پر آؤٹ کردیا۔ انگلینڈ کی دوسری وکٹ 36 کے مجموعی سکور پر گری جب محمد علی اولی پوپ کو پویلین کی راہ دکھائی، انہوں نے 15 رنز بنائے۔ 

پہلی اننگز میں سینچری بنانے والے زیک کرالی نے دوسری اننگز میں بھی عمدہ بیٹنگ کی اور 50 رنز بنا کر محمد علی کے ہاتھوں آؤٹ ہوئے۔ 

جو روٹ نے 73 رنز کی تیز رفتار اننگز کھیلی اور زاہد محمود کی وکٹ بنے۔ 

پاکستان کی پہلی اننگز

اس سے قبل پاکستانی کی ٹیم اپنی پہلی اننگز میں 579 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی تھی۔ 

راولپنڈی میں کھیلے جا رہے پانچ روزہ میچ  کے چوتھے روز پاکستان نے سات وکٹوں کے نقصان پر 499 رنز کے ساتھ اپنی اننگز کا دوبارہ آغاز کیا اور اس کی پوری ٹیم 579 رنز بنا سکی۔ 

اس طرح انگلینڈ کو پہلی اننگز میں 78 رنز کی برتری حاصل ہوگئی تھی۔ 

پاکستان کی جانب سے تین سینچریاں سکور کی گئیں، بابر اعظم 136، امام الحق 121 اور عبداللہ شفیق 114 رنز کے ساتھ نمایاں رہے جبکہ اپنا پہلا میچ کھیلنے والے سلمان آغا نے بھی نصف سینچری بناتے ہوئے 53 رنز کی اننگز کھیلی۔ 

انگلینڈ کی جانب سے اپنا پہلا ٹیسٹ میچ کھیلنے والے ول جیکس کامیاب ترین بولر رہے اور انہوں نے چھ وکٹیں حاصل کیں۔ جیل لیچ نے دو جبکہ اولی روبنسن اور جیمز اینڈرسن کے حصے میں ایک ایک وکٹ آئی۔ 

اپنا پہلا ٹیسٹ میچ کھیلنے والے ول جیکس نے چھ وکٹیں حاصل کیں (فوٹو: اے ایف پی)اس سے قبل انگلینڈ کی ٹیم اپنی پہلی اننگز میں 657 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی ہے، انگلینڈ کی اننگز میں چار سینچریاں شامل ہیں۔ بین ڈکٹ، زیک کرالی، اولی پوپ اور ہیری بروک نے سینچری سکور کی تھی۔ 

اب تک اس میچ میں سات سینچریاں سکور ہو چکی ہیں۔ 

دوسری جانب پاکستان کرکٹ بورڈ کا کہنا ہے کہ فاسٹ بولر حارث رؤف دوسری اننگز میں بولنگ کے دستیاب نہیں ہوں گے، وہ پہلی اننگز میں فیلڈنگ کے دوران انجرڈ ہوگئے تھے۔ 

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More