گردوں کی آٹھ عام بیماریوں کی علامات کیا ہوتی ہیں؟

بی بی سی اردو  |  Apr 23, 2024

Getty Images

انڈین سوسائٹی آف نیفرولوجی کے ایک حالیہ تحقیقی مقالے کے مطابق دنیا بھر میں 84 کروڑ افراد گردوں کے مختلف امراض سے متاثر ہیں یعنی دنیا میں ہر 10 میں سے ایک فرد کو گردوں کی کوئی نہ کوئی بیماری لاحق ہے۔

واضح رہے کہ دنیا میں موت کی 10 وجوہات میں گردوں کی بیماریاں ساتویں نمبر پر ہیں۔

گردوں کی بیماریوں میں اضافے کی ایک وجہ یہ ہے کہ یہ امراض ابتدائی مراحل میں زیادہ سنجیدہ نظر نہیں آتے۔

ملی میتھیو ایم جی ایم ہیلتھ کیئر ہسپتال میں سینئر یورالوجسٹ ہیں، جن کا کہنا ہے کہ جب مرض سنجیدہ شکل اختیار کرتا ہے تب ہی اس کو بطور بیماری زیادہ سنجیدگی سے لیا جاتا ہے۔

اسی لیے یہ ضروری ہے کہ گردوں کی بیماریوں اور ان کی علامات کو سمجھا جائے تاکہ مرض کے ابتدائی لمحات میں ہی ڈاکٹر کی مدد حاصل کی جاسکے تاہم ان تفصیلات میں جانے سے قبل یہ جان لیتے ہیں کہ گردے کیا اور کیسے کام کرتے ہیں۔

گردوں کا کام کیا ہے؟

گردے انسانی جسم کے سب سے اہم حصوں میں سے ہیں جن کا مرکزی کردار پیشاب کے ذریعے جسم سے فضلہ باہر نکالنا ہوتا ہے۔

اس کام کے لیے گردے خون سے ایسا مواد الگ کرتے ہیں جو انسانی جسم کے لیے نقصان دہ ہوتا ہے جن میں غیر ضروری معدنیات شامل ہوتی ہیں اور پھر صاف ہونے والا خون جسم میں گردش کر سکتا ہے۔

تاہم زندگی کا رہن سہن، خوراک، عادتیں، جینیاتی مسائل، ادویات اور دیگر صحت سے جڑے مسائل گردوں کے کام میں خلل ڈال سکتے ہیں۔

Getty Images

جب بھی گردوں کا معمول کا کام تعطل کا شکار ہوتا ہے تو اس کی وجہ کوئی نہ کوئی بیماری ہوتی ہے اور ایسے میں ایک بڑا خطرہ یہ ہوتا ہے کہ یہ بیماری ابتدائی مراحل میں سامنے نہیں آتی بلکہ چند علامات تو مکمل طور پر ظاہر بھی نہیں ہوتیں۔

ڈاکٹر ملی میتھیو کا کہنا ہے کہ جیسے جیسے بیماری کی شدت میں اضافہ ہوتا ہے علامات ظاہر ہونا شروع ہوتی ہیں اور طبی معائنے اور ٹیسٹ کے ذریعے ہی یہ جانا جا سکتا ہے کہ بیماری کس حد تک بڑھ چکی ہے۔

اب جانتے ہیں کہ گردوں کی چند عام بیماریاں کون سی ہیں اور ان کی علامات کیا ہوتی ہیں؟

کرونک کڈنی ڈیزیز

یہ گردوں کی ایک ایسی بیماری ہوتی ہے جو طویل عرصے تک رہتی ہے اور یہ اکثر ایسے افراد کو لاحق ہوتی ہے جن کو ذیابطیس یا بلڈ پریشر کا عارضہ ہوتا ہے۔

اس بیماری کے ابتدائی مرحلے میں کوئی علامات ظاہر نہیں ہوتیں اور اہم بات یہ ہے کہ یہ بیماری درست علاج سے دور ہو سکتی ہے۔

اس کی علامات میں الٹیاں آنا، بھوک نہ لگنا، پیروں اور ٹخنوں کا پھول جانا، سانس لینے میں مشکل ہونا، نیند نہ آنا اور کم پیشاب آنا شامل ہیں۔

Getty Imagesگردوں میں پتھری

گردوں میں پتھری حقیقت میں ایسی معدنیات ہوتی ہیں جو گردوں میں جمع ہو جاتے ہیں اور پتھریلی شکل اختیار کر لیتے ہیں۔

طبی ماہرین کے مطابق ایک یا دو پتھر بن جانے کے بعد پہلے پہلے کوئی علامات سامنے نہیں آتیں اور زیادہ سنجیدہ مسائل کا سامنا بھی نہیں ہوتا۔

اس مسئلے کی وجہ کم پانی پینا، موٹاپا، نامنساب خوراک اور رہن سہن کے طریقے ہوتے ہیں۔

اس بیماری سے متاثرہ افراد کو پیشاب کرنے میں تکلیف ہوتی ہے یا پھر پیشاب کے ساتھ خون آتا ہے۔ چند متاثرہ افراد میں جس مقام پر گردوں کی پتھری ہوتی ہے وہاں پر درد کی شکایت ہوتی ہے۔

ذیابیطس سے گردوں کی بیماری

تحقیق کے مطابق ذیابیطس سے متاثرہ ہر تیسرے فرد کو گردوں کی بیماری لاحق ہوتی ہے اور ان کے گردے ناکارہ ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔

یہ مرض ان افراد میں زیادہ ہوتا ہے جن میں ذیابیطس پر قابو نہیں رکھا جاتا۔

اس کی علامات میں پیروں کا پھول جانا، فوم جیسا پیشاب آنا، جسمانی تھکاوٹ، وزن میں کمی، جسم پر خارش، متلی شامل ہیں۔

Getty Imagesہائپر ٹینسیو نیفروسکلیروسس

ذیابیطس کے علاوہ گردوں کو جو مرض زیادہ متاثر کرتا ہے وہ ہائی بلڈ پریشر ہے جس کی وجہ سے گردوں میں موجود خون کی نالیوں کو نقصان پہنچتا ہے اور یوں ان کا معمول کا کام متاثر ہوتا ہے۔

اس کی وجہ سے خون سے غیر ضروری مواد کی صفائی کا کام نہیں ہو پاتا اور نہ ہی خون سے جسم کے لیے نقصان دہ معدنیات نکل پاتی ہیں۔ یوں غیر ضروری مواد خون کی نالیوں میں اکھٹا ہو جاتا ہے اور بلڈ پریشر کو اور زیادہ بڑھا دیتا ہے۔

اس کی علامات میں متلی اور قے، کمزوری، سردرد اور گردن میں درد رہنے کی شکایات شامل ہوتی ہیں۔

پیشاب کی نالی کا انفیکشن

اگرچہ پیشاب کی نالی میں انفیکشن ہونا براہ راست گردوں کی بیماری نہیں تاہم اس سے گردوں پر اثر پڑتا ہے۔

یہ بیماری کسی بیکٹیریا کی وجہ سے ہو سکتی ہے اور اگر اس انفیکشن کو جلد دور نہ کیا جائے تو یہ پیشاب کی نالی کے اوپر والے حصے تک پہنچ کر گردوں کو نقصان پہنچا سکتی ہے۔

اس کی علامات میں کمر درد، بخار، تکلیف دہ پیشاب، پیٹ کا درد، پیشاب کے ساتھ خون آنا اور متلی یا قے شامل ہیں۔

پولی سسٹک کڈنی ڈیزیز

یہ بیماری مثانے میں رسولی کی وجہ سے لاحق ہوتی ہے جو وقت کے ساتھ بڑھتی ہے اور گردوں کو ناکارہ بنا سکتی ہے۔ اس کی وجوہات میں جینیات کا بھی عمل دخل ہوتا ہے۔

اس مرض کی علامات میں پیٹ کے اوپر والے حصے میں درد، پیٹ کی کسی ایک جانب درد ہونا، پیشاب کے ساتھ خون آنا یا پھر بار بار پیشاب کی نالی میں انفیکشن کا ہونا شامل ہیں۔

Getty Imagesآئی جی اے نیفروپیتھی

یہ گردوں کی ایک ایسی بیماری ہے جس کا آغاز زیادہ تر بچپن اور نوجوانی میں ہو جاتا ہے۔

ڈاکٹر ملی میتھیو کا کہنا ہے کہ اس بیماری میں خون کے ساتھ پیشاب آتا ہے اور ٹیسٹ کے ذریعے اس بیماری کی تشخیص کی جا سکتی ہے۔

گردوں کا ناکارہ ہو جانا

گردوں کی مکمل ناکامی میں گردے کام کرنا چھوڑ دیتے ہیں تاہم اس مرض سے متاثرہ افراد میں علامات کا بہت دیر سے علم ہوتا ہے جب بیماری عام طور پر بہت بڑھ چکی ہوتی ہے۔

اس بیماری کے پانچ مرحلے ہوتے ہیں اور چوتھے مرحلے تک اس کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔

اس مرض کی علامات صرف اس وقت ظاہر ہوتی ہیں جب گردے مکمل طور پر کام کرنا چھوڑ چکے ہوتے ہیں۔

اس کی جو علامات اس وقت ظاہر ہوتی ہیں ان میں بھوک میں کمی، قے، شدید جسمانی کمزوری، جسم کا پھول جانا اور نیند نہ آنا شامل ہوتے ہیں۔

گردے کی پتھری کی علامات کیا ہیں اور اس سے کیسے بچا جائے؟انسانی جسم میں سؤر کے گردے کی پیوند کاری: ’یہ لاکھوں مریضوں کو ایک نئی زندگی دے سکتی ہے‘گُردے کو کتنا نقصان پہنچ چکا ہے یہ پیشاب کی رنگت سے کیسے معلوم کیا جائے؟
مزید خبریں

تازہ ترین خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More