امریکاکازیرتربیت سعودی اہلکاروں کو ملک بدرکرنےکا فیصلہ

بول نیوز  |  Jan 13, 2020

امریکا نے چائلڈ پورنو گرافی کے الزام میں ایک درجن سعودی فوجی طالبعلموں کوملک بدرکرنےکافیصلہ کرلیا۔

امریکا نےفلوریڈا میں ایک سعودی افسرکی جانب سے فائرنگ کے واقعے کے بعدانتہا پسندوں سےروابط اورچائلڈ پورنوگرافی کےالزام میں ایک درجن سعودی فوجی طالبعلموں کو ملک بدر کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

فرانسیسی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ برس دسمبرمیں امریکا کے سعودی فوجی تربیتی پروگرام میں شامل محمد الشامرانی نے نیول ایئر اسٹیشن پینساکولا میں فائرنگ کردی تھی جس کے نتیجے میں 3 نیوی اہلکار ہلاک اور 8 افراد زخمی ہوگئے تھے بعد میں حملہ آور بھی پولیس کی فائرنگ سے مارا گیا تھا۔

  رپورٹ کے مطابق  تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی کہ ایک درجن سے زائد زیر تربیت اہلکار محمد الشامرانی کی مدد کرنے میں  ملوث  نہیں لیکن کچھ افراد کے انتہا پسندوں تنظیموں سےروابط جبکہ کچھ افرادچائلڈ پورنوگرافی میں ملوث پائےگئے۔

فیڈرل بیورو آف انویسٹگیشن (ایف بی آئی)  کی جانب سے مذکورہ تحقیقات  میں یہ بات بھی سامنےآئی کہ حملے سےقبل کسی نے حملہ آور کے پریشان کن رویے کے بارے میں نہیں بتایا تھا۔

گزشتہ  سال دسمبر کے وسط میں پینٹاگون نےکہا تھا کہ امریکا میں اس وقت زیرِ تربیت سعودی فوجی اہلکاروں کے پس منظرکاجائزہ لیا گیا اور ’فوری خطرے کی کوئی بات سامنےنہیں آئی‘۔

وزارت دفاع کے حکام نے حملے کے بعد سعوی عرب کے فوجی طالبعلموں کے لیے عملی تربیت روک دی تھی تاہم کمرہ جماعت میں پڑھانےکاعمل جاری تھا۔

واضح رہےکہ امریکامیں غیر ملکی افواج کے 5 ہزار اہلکار زیرتربیت ہیں جس کے تمام شعبوں میں تقریباً 8 سو 50 سعودی اہلکار بھی شامل ہیں۔

 امریکا میں چائلڈ پورنو گرافی  قطعی طورپرممنوع ہے۔ اورکوئی بھی شخص  چائلڈ پورنوگرافی سےمتعلق مواد اپنی الیکٹرانک ڈیوائسز میں سٹور کرتا پایا جاتاہےتو س کے خلاف قانونی کارروائی شروع ہو جاتی ہے اورالزامات ثابت ہونے کی صورت میں کئی سال قید کی سزا بھی بھُگتنا پڑتی ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More