’ہم خوفزدہ ہو گئے کیونکہ جہاز بہت تیزی سے نیچے آ رہا تھا‘

اردو نیوز  |  Mar 11, 2020

اسلام آباد کے رہائشیوں کے لیے مارچ کے مہینے میں شہر کی فضاؤں میں جیٹ فائٹرز کی آوازیں اور اڑان کوئی غیر معمولی بات نہیں پھر بھی ہر سال 23 مارچ کی پریڈ کی ریہرسل کے لیے جب ایف 16 سولہ اور جے ایف 17 تھنڈر جہازوں کو اڑتے دیکھ کر لوگ کچھ دیر کے لیے رک جاتے ہیں۔

11 مارچ کی صبح اسلام آباد کے مصروف تجارتی مرکز آبپارہ میں دکاندار جب گاہکوں سے بھاؤ تاؤ کر رہے تھے تو اس دوران جنگی جہازوں کی آوازیں فضا میں گونجیں۔ کچھ شہریوں کی آنکھیں آسمان پر جیٹ فائٹر کو تلاش کرتی رہیں اور بعض نے موبائل فون کے کیمرے ایف سولہ کی پرواز ریکارڈ کرنے کے لیے آن کر لیے۔

ایک شہری نے اردو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’جب جہاز فضا میں بلند ہوا تو ہم آبپارہ مارکیٹ سے دیکھ رہے تھے، پھر وہ سیدھا نیچے کی جانب آیا۔ ہم خوفزدہ ہوگئے کیونکہ وہ بہت نیچے آ رہا تھا۔‘

مزید پڑھیںمکینک کی غلطی سے اربوں روپے مالیت کا ایف 16طیارہ تباہNode ID: 330181مراکش، امریکہ سے ایف 16طیارے خریدے گاNode ID: 411231اسلام آباد: پاکستانی فضائیہ کا ایف 16 طیارہ گر کر تباہ، پائلٹ ہلاک Node ID: 464206

 

انہوں نے بتایا کہ ’اور پھر ہم نے جہاز کو واپس اوپر اٹھتے نہیں دیکھا۔ چند ہی سیکنڈز میں زمین ہلی اور جس جگہ جہاز گرا تھا وہاں سے دھواں اٹھتا دکھائی دیا تو ہم نے جائے حادثے کی طرف دوڑ لگا دی۔

حادثے کے بعد اسلام آباد کے جی سکس سیکٹر میں رہنے والے سینکڑوں افراد پریڈ گراؤنڈ کے قریب شکر پڑیاں کے علاقے کی جانب دوڑ پڑے جہاں سے ان کو دھواں اٹھتا دکھائی دے رہا تھا۔ آبپارہ مارکیٹ میں خریداری کے لیے آئے شہری اور تاجر بھی پیدل ہی جاسمین پارک سے متصل گرین بیلٹ میں پہنچے۔

حادثے کے 15 منٹ کے بعد علاقے میں سینکڑوں شہریوں کے درمیان سے فائر بریگیڈ اور ایمبولینس سائرن بجاتی راستہ بناتی دیکھی جا رہی تھیں۔

ایک اور عینی شاہد نے اردو نیوز کو بتایا کہ جب وہ حادثے کی جگہ پہنچے تو علاقے میں ہائی ٹرانسمیشن لائن گری ہوئی تھی، درخت اور بجلی کے کھمبے ٹوٹے ہوئے تھے۔ طیارے کے ٹکڑوں سے دھواں اٹھ رہا تھا اور فوجی اہلکار شہریوں کو جائے حادثے سے ہٹا رہے تھے۔

کچھ دیر بعد نیوز چینلز کی گاڑیوں کی قطار بھی جائے حادثہ پر پہنچی اور فضا میں آرمی ایوی ایشن کے ہیلی کاپٹر بھی گشت کرنے لگے۔ آدھے گھنٹے کے بعد درجنوں فوجی اہلکار پریڈ ایونیو جانے والی سڑک پر گاڑیوں سے اترے تو شہریوں نے واپس آبپارہ مارکیٹ کی جانب دوڑ لگا دی۔

واٹس ایپ پر پاکستان کی خبروں کے لیے ’اردو نیوز‘ گروپ جوائن کریں

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More