کورونا وائرس: کیا امریکہ نے کووِڈ 19 کے علاج کے لیے کلوروکوئن کو منظور کر لیا ہے؟

بی بی سی اردو  |  Mar 26, 2020

Reuters

امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دعویٰ کیا ہے کہ ملیریا کے خلاف استعمال ہونے والی ایک دوائی کو امریکہ نے نئے کورونا وائرس، کووِڈ 19، کے علاج کے لیے منظور کر لیا ہے۔

کلوروکوئن ملیریا کے علاج کی سب سے قدیم، مشہور اور مؤثر دوا ہے۔

اس رپورٹ میں ہم یہ جاننے کی کوشش کریں گے کہ آیا صدر ٹرمپ درست کہہ رہے ہیں اور آیا یہ دوائی کورونا کے علاج کے لیے کتنی مؤثر ہے؟

کلوروکوئن گذشتہ کئی دہائیوں سے ملیریا کے علاج کے لیے استعمال کی جا رہی ہے۔ مگر براعظم افریقہ کے بہت سے علاقوں میں یہ دوا اب تجویز نہیں کی جاتی اور اس کی وجہ یہ ہے کہ افریقہ کہ ان مخصوص علاقوں میں ملریا پھیلانے والے جرثوموں نے اس دوا کے خلاف اپنی مدافعت کی صلاحیت بڑھا لی ہے۔

کورونا وائرس: سماجی دوری اور خود ساختہ تنہائی کا مطلب کیا ہے؟

دوسری جانب کئی ممالک ایسے بھی ہیں جنھوں نے اس دوا کے استعمال کو روکنے کے لیے ضوابط متعارف کروائے ہیں مگر آج بھی وہ ممالک جہاں ادویات سازی کی صنعت پر نجی شعبے کا راج ہے وہاں نہ صرف اس دوا کو تجویز کیا جاتا ہے بلکہ اس کی بڑے پیمانے پر فروخت بھی کی جاتی ہے۔

صدر ٹرمپ کے حالیہ بیان کے بعد نائجیریا میں کلوروکوئن کی طلب اس حد تک بڑھی کہ چند میڈیا رپورٹس کے مطابق ملک میں اب اس دوا کی قلت پیدا ہو گئی ہے۔

کلوروکوئن کو کورونا کے علاج کے لیے منظور نہیں کیا گیا

Reuters
امریکی سائنسدانوں نے یہ جاننے کے لیے کلینیکل ٹرائل شروع کیے ہیں کہ آیا کلوروکین کورونا وائرس کے علاج میں مددگار ثابت ہو سکتی ہے

صدر ٹرمپ نے ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران یہ دعویٰ کیا تھا کہ امریکہ کی ’فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن‘ نے کورونا وائرس کے علاج کے لیے کلوروکوئن کو بطور مؤثر دوا منظور کر لیا ہے۔

’ہم بہت جلد اس قابل ہو جائیں گے اور (کورونا وائرس کی یہ) دوا جلد ہی دستیاب ہو گی۔ اور یہ وہ شعبہ ہے جس میں ’فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن‘ بہت بہتر ہے۔ انھوں نے (دوا کی) منظوری کے عمل کو مکمل کر لیا ہے۔ یہ (دوا) منظور کر لی گئی ہے۔‘

واضح رہے کہ کلوروکوئن کو ملیریا اور آرتھرائٹس کے علاج کے لیے منظور کی گئی ہے اور امریکہ کی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن نے وضاحت کی ہے کہ اسے کووِڈ 19 کورونا وائرس کے علاج کے لیے منظور نہیں کیا گیا ہے۔

ادارے کا مزید کہنا ہے کہ ’ایف ڈی اے سے منظور شدہ کوئی ایسی دوائی فی الوقت موجود نہیں ہے جسے کووِڈ 19 کے علاج یا اس سے بچاؤ کے لیے استعمال کیا جا سکے۔‘

تاہم ایف ڈی اے کی جانب سے یہ آگاہ نہیں کیا گیا کہ آیا اس حوالے سے کوئی تحقیق جاری ہے کہ کلوروکوئن کووِڈ 19 کے علاج کے لیے مؤثر ہے یا نہیں۔

عالمی تحقیق کہاں تک پہنچی ہے؟

یہ کوئی اچھنبے کی بات نہیں کہ کلوروکوئن کو کورونا وائرس کے علاج کے لیے استعمال کرنے پر تحقیق جاری ہے۔

یہ ملیریا کے علاج کے لیے ایک آزمودہ، سستی اور آسانی سے بنائی جانے والی دوا ہے۔ یہ دوا ملریا کے مریض میں بخار اور جلن کو کم کرنے میں استعمال ہوتی ہے۔

بی بی سی کے نمائندہ صحت جیمز گلیگہر کہتے ہیں کہ ’لیبارٹری میں ہونے والی تحقیقات سے ایسا لگتا ہے کہ کلوروکوئن کورونا وائرس کو روک سکتی ہے۔ ڈاکٹروں کی جانب سے ایسے طبی شواہد دیے گئے ہیں جو ظاہر کرتے ہیں کہ یہ دوا مدد کر سکتی ہے۔‘

لیکن انتہائی اہم بات یہ ہے کہ اب تک کوئی ایسا مکمل کلینیکل ٹرائل نہیں ہوا ہے جو یہ ظاہر کر سکے یہ دوا کورونا کے مریض کے جسم میں داخل ہو کر کیا ردعمل دیکھاتی ہے۔ مگر اس دوا کے ٹرائل چین، امریکہ، برطانیہ اور سپین میں جاری ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کا کہنا ہے کہ اب تک اس دوا کی تاثیر کا کوئی قطعی ثبوت موجود نہیں ہے مگر یہ دوا اس حوالے سے ہونے والی جاری تحقیق کا ایک حصہ ہے۔

آکسفورڈ یونیورسٹی کے گلوبل ہیلتھ نیٹ ورک کے ڈائریکٹر پروفیسر ٹروڈی لینگ کا کہنا ہے کہ ’یہ جاننے کے لیے کہ کون سے علاج وائرل انفیکشن کی روک تھام کر سکتے ہیں ہمیں کلینیکل ٹرائلز کرنے کی ضرورت ہے تاکہ یہ ثبوت حاصل کیا جا سکے کہ کون سے دوا کام کی ہے اور کون سی نہیں۔‘

Reuters

تاہم اس دوا میں دلچسپی پہلے ہی بہت بڑھ چکی ہے۔

گوگل ٹرینڈ ڈیٹا کے مطابق گذشتہ ہفتے کے دوران کلوروکوئن سرچ کرنے والوں میں اضافہ ہوا ہے اور حال ہی میں ہلچل اس وقت مچی جب کاروباری شخصیت ایلون مسک نے ایک ٹویٹ کر کے اس حوالے سے ہونی والی تحقیق کو شیئر کیا۔

نائجیریا میں کلوروکوئن کی بڑے پیمانے پر خریداری کیوں؟

لاگوس میں نمائندہ بی بی سی ڈینئیل سیمنیوریما کے مطابق نائجیریا کے ہر چرچ، مسجد اور سکولوں میں ہر فرد کی زبان پر کورونا کا تذکرہ ہے۔

نائجیریا میں کلوروکوئن پر بحث کا سلسلہ اس وقت شروع ہوا تھا جب گذشتہ ماہ فروری میں یہ تحقیق سامنے آئی کہ چین میں اس دوا کو کورونا کے علاج کے لیے ٹیسٹ کیا جا رہا ہے۔ یہ بات سامنے آنے کے بعد سے نائجیریا کے لوگوں نے کلوروکوئن کو ذخیرہ کرنا شروع کر دیا تھا۔

اب جبکہ حال ہی میں صدر ٹرمپ نے اس کا تذکرہ کیا تو نائجیریا میں کلوروکوئن حاصل کرنے کی دوڑ میں مزید اضافہ دیکھنے میں آیا۔ وہاں فارمیسیوں اور دکانوں میں اس وقت کلوروکوئن کی کمی ہو گئی ہے۔

مگر نائجیریا کے سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول نے عوام کو متنبہ کیا ہے کہ وہ اس دوا کی خریداری بند کر دیں۔

ادارے نے کہا ہے کہ ’عالمی ادارہ صحت نے کلوروکوئن کو کووِڈ 19 کے علاج کے لیے منظور نہیں کیا ہے۔

سینٹر فار ڈیزیز نے عوام کو اپنا علاج کے لیے بذات خود دوا تشخیص کرنے سے اجتناب برتنے کی تلقین بھی کی ہے۔

نمائندہ بی بی سی ڈینئیل سیمنیوریما کے مطابق لوگ محفوظ رہنے کے لیے خود سے فیصلے لے رہے ہیں اور اس عمل کے سنگین طبی نتائج ہو سکتے ہیں۔

ایسی رپورٹس بھی سامنے آئی ہیں کہ نائجیریا میں کئی افراد کلوروکوئن کی زیادہ مقدار استعمال کرنے سے متاثر بھی ہوئے ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More