صدا کار اور فلمساز عنایت حسین بھٹی کو مداحوں سے بچھڑے21برس بیت گئے

ہم نیوز  |  May 31, 2020

گلوکار، اداکار، صدا کار اور فلمساز عنایت حسین بھٹی کو مداحوں سے بچھڑے اکیس برس بیت گئے ۔ انہوں نے ڈھائی ہزار کے قریب گیت ریکارڈ کرائے، چار سو سے زائد فلموں میں بھی کام کیا۔

12جنوری 1928ء کو گجرات (پاکستان) میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے پبلک ہائی اسکول گجرات سے میٹرک کیا اور وکالت کی ڈگری حاصل کی اور وہ حافظ قرآن بھی تھے۔

انہوں نے وارث شاہ، بلھے شاہ، خواجہ غلام فرید اور میاں محمد بخش سمیت دیگر عظیم صوفی شعراء کا کلام گا کر سننے والوں کے دلوں میں گھر کیا۔

عنایت حسین نے1950 کی دہائی میں فلم ‘’شہری بابو‘ میں معاون کردار ادا کرکے اداکاری کا آغازکیا۔ عنایت حسین بھٹی نے فلم ’ہیر‘ میں رانجھے اور وارث شاہ میں وارث شاہ کا کردار ادا کیا۔ ان کے گائے ہوئے گیت چن میرے مکھناں اور دنیا مطلب دی او یار آج بھی مقبول ہیں۔

عنایت حسین بھٹی نے 500فلموں میں 2500کے قریب گانے ریکارڈ کرائے۔ انھوں نے400سے زیادہ فلموں میں کام کیا، جن میں 40فلموں میں ہیرو کے روپ میں جلوہ گر ہوئے۔ انہوں نے 1967 میں اپنی ذاتی پروڈکشن کمپنی کے بینر تلے فلم ’’چن مکھناں‘‘ بنائی، جس نے کامیابی کے تمام ریکارڈ توڑ دیے۔

1965ء کی پاک بھارت جنگ میں ریڈیو پاکستان لاہور سے عنایت حسین بھٹی کی منفرد اور گرج دار آواز میں ایک ترانہ بجتا تھا ’’اے مردِ مجاہد جاگ ذرا، اب وقت شہادت ہے آیا‘‘ اور اسی جنگی ترانے سے پاکستان میں قومی موسیقی کے باب کا آغاز ہوا۔ 31مئی 1999ء کو ان کی وفات سے پانچ عشروں پر محیط بے مثال کیریئراختتام پذیر ہوا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More