کراچی سرکلر ریلوے منصوبہ شٹل کاک بن گیا

سماء نیوز  |  Oct 18, 2020

عدالت نے کراچی سرکلر ریلوے منصوبے کی رواں برس میں ہی تکمیل کا حکم دیا ہے لیکن فی الحال سوائے بوگیوں کے اس سروس کیلئے پل، انڈر پاس فینسنگ، پٹڑی اور پلیٹ فارم کچھ دستیاب نہیں۔

پاکستان ریلوے نے بوگیاں تو بنا لی ہیں لیکن جہاں ٹرين چلنی ہے وہاں ترقیاتی کام اور سہولیات کی فراہمی اب تک عمل میں نہیں لائی جاسکی ہے جس کی ذمہ داری سندھ کے وزیر برائے ٹرانسپورٹ اویس قادر شاہ نے فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن پر ڈال دی ہے۔

اس منصوبے کے تحت سندھ حکومت کو 24 مقامات پر پل اور انڈر پاس بنانے ہيں اور 30 کلومیٹر کے علاقے میں جالیاں بھی لگانی ہيں جس کا پہلا ٹینڈر ایوارڈ نہیں کیا جاسکا تو دوبارہ ٹینڈر کیا گیا ہے۔

اویس قادر شاہ کا کہنا ہے کہ سندھ حکومت فنڈز فراہم کردے گی لیکن فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن کام کا آغاز تو کرے۔

جالیوں کے حوالے سے صوبائی وزیر نے بتایا کہ ٹریک کے دونوں طرف جالیاں جلد لگنا شروع  ہوجائیں گی۔

دوسری جانب سرکلر ریلوے کے پراجیکٹ ڈائریکٹر عامر داؤد پوتہ کہتے ہیں کہ سندھ حکومت بسم اللہ کرے تو ہم بھی کام شروع کردیں گے۔

ریلوے کے وفاقی وزیر شیخ رشید کا یہ کہنا ہے کہ ریلوے اپنے حصے کا کام مکمل کرچکی ہے۔

چیف جسٹس کہہ چکے ہیں کہ سرکلر ریلوے ہر صورت اسی سال مکمل کیا جائے اور عوام بھی طویل عرصے سے اس منصوبے کے منتظر ہیں تاکہ انہیں ٹرانسپورٹ کی کچھ سہولیات میسر ہوجائیں لیکن صوبائی اور وفاقی حکومتیں کام کی تاخیر پر ایک دوسرے کو ہی ذمہ دار ٹھہرا رہی ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More