نرس کاپانچ ہزار سے زائد نومولود بچوں کو تبدیل کرنے کا اعتراف

روزنامہ اوصاف  |  Feb 24, 2021

میٹرنٹی وارڈ میں بارہ سال تک کام کرنے والی نرس نے بستر مرگ پر پانچ ہزار سے زائد نومولود بچوں کو تبدیل کرنے کا اعتراف کر لیا۔ تفصیلات کے مطابق نرس نے اپنے اعترافی بیان میں کہا کہ میں نے اپنی بارہ سالہ نوکری کے دوران کئی جوڑوں کے بچوں کو آپس میں تبدیل کر دیا۔ نرس نے کہا کہ میں نے محض تفریح کے لیے نومولود بچوں کو اُن کے اصل والدین کی بجائے دوسرے جوڑوں کو دیا۔نرس کا کہنا تھا کہ میں خدا کے سامنے اپنے گناہوں کا اعتراف کرنا چاہتی ہوں۔ میں کچھ بھیچُھپانا نہیں چاہتی۔ یونیورسٹی ٹیچنگ اسپتال زمبیہ میں اپنی سروس کے دوران میں نے کم و بیش پانچ ہزار بچوں کو بدلا۔ اگر کوئی 1983ء سے 1995ء کے دوران پیدا ہوا تو اس بات کا قوی امکان ہے کہ جن کے ساتھ وہ رہے ہیں یا جن کو وہ اپنے والدین مانتے ہیں وہ اُن کے حقیقی والدین نہ ہوں۔کیونکہ ان سالوں کے دوران میں نے کئی بچے بدلے ۔ نرس نے ان سالوں میں پیدا ہونے والے بچوں سے کہا کہ آپ اپنے بہن بھائیوں پر غور کریں، اگر آپ کی اور اُن کی رنگت میں فرق ہے تو میں آپ سے معذرت خواہ ہوں۔ نرس کا یہ اعتراف حیران کُن ہونے کے ساتھ ساتھ نا ممکن بھی معلوم ہوتا ہے۔ جبکہ اس اعتراف کے سچے اور جھوٹے ہونے پر کئی سوالات اُٹھ رہے ہیں۔مذکورہنرس ٹرمینل کینسر کے موذی مرض میں مبتلا تھی، ڈاکٹرز کے مطابق خاتون کے زندہ رہنے کے امکانات انتہائی کم ہیں ، یہی وجہ تھی کہ وہ مرنے سے قبل اپنے جُرم کا اعتراف کرنا چاہتی تھی۔ کچھ رپورٹس کے مطابق مذکورہ نرس کی اس حرکت کی وجہ سے کئی جوڑوں میں غلط فہمیاں پیدا ہوئی اور بات طلاق تک جا پہنچی، کیونکہ جوڑوں کے مابین سب سے بڑا اختلاف یہی تھا کہ یہ بچہ اُن کا نہیں ہے۔ نرس کے اس ہولناک انکشاف پر جنرل نرسنگ کونسل آف زمبیہ نے تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے ۔تاہم ابتدائی طور پر کونسل اس بات کی تصدیق نہیں کر سکی کہ آیا مذکورہ نرس نے یونیورسٹی ٹیچنگ اسپتال میں بطور نرس کام کیا تھا۔ 
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More