لبنانی پاؤنڈ 80فیصد تک گِرگیا، ملک بھرمیں مظاہرے

سماء نیوز  |  Mar 08, 2021

فوٹو: ٹوئٹر

امریکی ڈالر کے مقابلے لبنانی پاؤنڈ کی قیمت گرنے کیخلاف لبنان کی عوام سڑکوں پر نکل آئی۔

مظاہرین نے دارالحکومت بیروت آنے والے تمام راستے بند کردیے جبکہ احجاج کا دائرہ ملک بھر میں پھیل چکا ہے، مظاہرین نے عوامی احتجاج کو “یومِ غضب” کا نام دیا ہے۔

بلیک مارکیٹ میں ایک امریکی ڈالر کی قیمت 11 ہزار لبنانی پاؤنڈ کی حد پار کرچکی ہے جس کے نتیجے میں اشیاء کی قیمتوں میں بھی ریکارڈ اضافہ ہوگیا ہے جبکہ لبنان میں آدھی سے زیادہ آبادی غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے پر مجبور ہے۔ ملک میں بے روزگاری کی شرح خوف ناک حد تک بلند ہوچکی ہے۔

لبنان کے دارلحکومت بیروت کی بندرگاہ پر ہونے والے خوفناک دھماکے کے چند روز بعد حسان دیاب کی حکومت مستعفی ہو گئی تھی جبکہ وزیراعظم سعد حریری کا صدر میشیل عون کے ساتھ اختلافات کے باعث نئی حکومت تشکیل دینے میں کامیاب نہیں ہوسکے۔

دوسری جانب لبنان میں 2019 کے بعد بدترین اقتصادی بحران دیکھا جارہا ہے۔ اس کے نتیجے میں مقامی کرنسی ڈالر کے مقابلے میں 80فیصد سے زیادہ قدر کھو چکی ہے۔

واضح رہے کہ بیروت کی بندرگاہ پر گزشتہ سال ہونے والے دھماکے نتیجے میں 135افراد ہلاک جبکہ 4ہزار سے زائد زخمی تھے۔ بیروت دھماکے کے بعد سے لبنان سنبھل نہیں سکا اور مسلسل انتشار کا شکار ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More