جنوبی افریقہ کو شکست، سیریز 1-2 سے پاکستان کےنام

سماء نیوز  |  Apr 07, 2021

فوٹو: پی سی بی

پاکستان نے جنوبی افریقہ کو تیسرے ون ڈے میں 28 رنز سے شکست دیکر سیریز 1-2 اپنے نام کرلی۔

سنچورین میں کھیلے جارہے میچ میں جنوبی افریقی کپتان نے ٹاس جیت کر فیلڈنگ کا فیصلہ کیا، پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے پاکستان کی جانب سے امام الحق اور فخرزمان نے پہلی وکٹ کی شراکت میں 112 رنز کا اوپنگ اسٹینڈ فراہم کیا۔

جس کے بعد امام الحق 57 رنز بنانے کے بعد کیشیو مہاراج کی شکار بنے، کپتان بابراعظم نے 90رنز کی شاندار اننگز کھیلی جبکہ اختتامی اوورز میں حسن علی نے انکا ساتھ دیتے ہوئے 11گیندوں پر 32رنز اسکور کیے۔

فخر زمان نے لگاتار دوسری سنچری اسکور کی اور 101رنز بنائے، فخر کے آؤٹ ہونے کےبعد قومی ٹیم کا لوئر مڈل آرڈر بری طرح ناکام ہوا۔ وکٹ کیپر محمد رضوان 2، سرفراز احمد 13، فہیم اشرف 1 اور محمد نواز 4رنز بناسکے۔

جنوبی افریقہ کی جانب کیشیو مہاراج نے 3 جبکہ ایڈن مارکرم 2وکٹیں حاصل کرسکے۔

جواب میں جنوبی افریقی ٹیم کے اوپنر جانیمن مالان نے 70رنز بنائے اور محمد نواز کاشکار بنے۔

جنوبی افریقہ کی جانب سے ایڈن مارکرم 18، جےاسمٹس 17، کپتان ٹیمبا باووما 20، ہینڈریکس 4 ، کیشو مہاراج 19 اور سپاملہ 4 رنز بناسکے تاہم اینڈیل فیلکوایو اور ڈوپاویلن نے شاندار بلےبازی کا مظاہرہ کیا اور باالترتیب 54، 62 رنز کی اننگز کھیلی۔

پاکستان کی جانب سے اسپنر محمد نواز نے 3، حارث رؤف، شاہین شاہ آفریدی نے دو دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا جبکہ حسن علی اور عثمان قادر نے ایک ایک وکٹ حاصل کرسکے۔

قومی ٹیم میں 4کھلاڑیوں کو موقع دیا گیا ہے جبکہ جنوبی افریقی ٹیم میں 8 تبدیلیاں کی گئی تھیں۔

واضح رہے کہ جنوبی افریقہ میں پاکستانی ٹیم نے اب تک 34 ون ڈے میچز کھیلے ہیں جن میں وہ صرف 12 جیت سکی ہے۔ تاہم جیت کا بہتر ریکارڈ نہ رکھنے کے باوجود گرین شرٹس وہ واحد ایشیائی ٹیم ہے جس نے 2014-2013 میں پروٹیز کو ان کے ہوم گراؤنڈ پر ون ڈے سیریز میں شکست دی تھی۔

خیال رہے کہ ون ڈے میچز میں پاکستان کے خلاف جنوبی افریقہ کا پلڑا ہمیشہ بھاری رہا ہے۔ دونوں ٹیموں کے درمیان اب تک 80 میچز کھیلے جاچکے ہیں جن میں سے50 میں جنوبی افریقہ نے کامیابی حاصل کی جبکہ ایک بے نتیجہ رہا۔

دونوں ٹیموں کے درمیان کھیلے گئے آخری 5 میچز میں بھی جنوبی افریقہ نے 3جیتے ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More