ہماری کورونا ویکسینیشن کا تناسب ملک بھر میں سب سے زیادہ ہے، خالد خورشید

بول نیوز  |  Jul 23, 2021

وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید نے کہا کہ ہماری کورونا ویکسینیشن کا تںاسب ملک بھر میں سب سے زیادہ ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید نے کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز سے متعلق نیوز کانفرنس کی جس میں انہوں نے کہا کہ کورونا کے بڑھتے ہوئے کیسز کی روک تھام میں شہریوں کو بھی اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان آنے والے سیاحوں کیلئے ویکسینیشن سرٹیفکیٹ لازمی قرار دیا گیا ہے، ضلعی انتظامیہ کو بھی ہدایات کی گئی ہے کہ ایس او پیز پر ہر صورت عمل درآمد کروائیں۔

خالد خورشید نے کہا کہ گلگت بلتستان میں تیس فیصد سے زائد غریب لوگ رہتے ہیں، لاک ڈاؤن سے غریبوں پر منفی اثرات پڑیں گے، عوام کو بھی احساس کرتے ہوئے ایس او پیز پر مکمل عمل درآمد کرنا ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ ہوٹلز انڈسٹری کو ہدایات دی گئی ہیں کہ بغیر ویکسینیشن کے آنے والے سیاحوں کو رہائش نہ دے یا محکمہ صحت کو اطلاع کر کے ویکسینیشن کروائیں، ہمارے پاس ڈاکٹروں کی شدید کمی ہے، بے ہوشی کیلئے صرف 9 ڈاکٹر موجود ہیں، ڈاکٹروں کی کمی کو مدنظر رکھتے ہوئے ڈومیسائل کی شرط ختم کی ہے، اس صورتحال سے ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کر کے نکلنا ہے۔

وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان نے کہا کہ اسپتالوں میں گنجائش بڑھا رہے ہیں، ماہ ستمبر کے آخر تک گلگت بلتستان میں کو کورونا ویکسین کو مکمل کرنا ہے، انڈین سے ڈیلٹا ویرینٹ کورونا کی لہرآئی ہوئی ہے، این سی او سی نے کورونا کے معاملے کو بہترین طریقے سے سنبھالا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے ہوٹلنگ، پارکس بند کردیئے اور دفاتر کی بجائے ورک ٹو ہوم کروایا ہے، لاک ڈاؤن مسئلے کا حل نہیں ہے، ایس اوپیزکا خیال رکھا جائے، کورونا کیسز جب کم تھے تو ایس او پیز کا بھرپور خیال رکھا جاتا تھا،  اب جب بہت تیزی سے کورونا پھیل رہا ہے تو لوگ ایس او پیز پر عملدرآمد نہیں کر رہے۔

وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید نے مزید کہا کہ ویکسین کورونا کا مکمل علاج نہیں ہے لیکن اس سے خطرات کم ہوجاتے ہیں، ویکسینیشن، ماسک اور فزیکل ڈسٹینس کورونا کا حل ہے، چند دنوں تک اسپتالوں میں کورونا بیڈز کی گنجائش بڑھا کر 5 سو تک لے جائیں گے۔

Adsense 300×250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More