اسکول ڈیسکوں میں کرپشن کامعاملہ:سردارشاہ کاازسر نوخریداری کااعلان

سماء نیوز  |  Sep 15, 2021

کراچی کے سرکاری اسکولوں ڈیسکوں میں کرپشن کے معاملے پر صوبائی وزیر تعلیم سردار شاہ ازسر نوڈیسک خریداری کااعلان کردیا۔

کراچی میں مشترکہ پريس کانفرنس کرتے ہوئے صوبائی وزیر سعید غنی اور سردار شاہ نے کہا کہ ٹی وی چینلز پر اسکول فرنيچرکی کچھ خبريں چل رہی ہيں، جس میں سرکاری اسکولوں میں ڈیسکوں کی خریدی میں کرپشن ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ مئی 2018ء ميں ايک سينٹرل پروکيورمنٹ کميٹی بنائی گئی تھی، کميٹی کے سربراہ نثار صديقی تھے۔ کميٹی کے پاس جو بڈز آئی تھيں اسے کميٹی نے رد کرديا تھا، بڈز ساڑھے5 سے 6 ہزار کی آئی تھيں تاہم کمیٹی نے سمجھا یہ کوالٹی صحیح نہیں ہوگی اسی لئے ٹینڈر نہیں ہوا۔

کميٹی سربراہ نثار صديقی کرونا کے باعث انتقال کرگئے تھے جن کی جگہ آئی بی اے سکھر کےنئے سربراہ کو پروکيورمنٹ کميٹی کا سربراہ تعینات کیا گیا تھا، منسٹر يا سيکريٹری کا معاملے ميں کوئی براہ راست کردار نہيں تھا۔ 29 جون 2021 ڈی جی نيب کو دوبارہ خط لکھا گيا تھا۔

سعید غنی نے کہا کہ پروکيورمنٹ کميٹی نے شيشم يا دوسری لکڑی کی ڈيسک خريدنے کا فيصلہ کيا تھاجبکہ سستے دام ملنے والے ڈیسک نہیں لیے تھے اور اسکی اسٹیٹمنٹ کاسٹ 12 سے 13 ہزار لگائی گئی تھی۔

سابق صوبائی وزیرسندھ سعید غنی نے کہا تھا کہ نثار صديقی کی نيت پر ہميں کوئی شبہ نہيں ہے، 2019 دوبارہ ٹينڈر ہوئے، اس وقت تعليم کا محکمہ وزيرعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کے پاس تھا۔

محکمہ تعلیم سندھ ایک ڈیسک 29ہزار میں خریدےگا

صوبائی وزیر سندھ سعید غنی نے کہا کہ اپوزيشن ليڈر صاحب کسی بازار ميں چلے گئے اورڈيسک لے آئے، يہ اپنے گھر کيلئے تو ايسی خريداری کرسکتے ہيں۔ محکمہ تعليم کے فنڈزسےغريب آباد سے خريداری نہيں کرسکتے۔ ڈیسکوں کی خریداری سيپرارولز کے مطابق کی جاتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کسی بھی بڈرز کو کوئی ايڈوانس ادائيگی نہيں کی جائيگی، ٹی وی پر آيا کہ سرکاری خزانے کو 3 ارب کا ٹيکا لگ رہا ہے۔ پروکيورمنٹ جو رقم بتاتے ہيں ان ميں خريداری اور ديگر اخراجات بھی ہوتےہيں۔ 3.6 ارب روپےميں سے تقريبا1ارب روپےٹيکس اورٹرانسپورٹيشن ميں خرچ ہوئے۔

صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ چاہوں گا کسی دن پروکيورمنٹ کميٹی کے ممبران کو بھی بٹھائيں، دو مرتبہ ٹينڈرز منسوخ ہوئے ہيں۔ عدالتيں کہتی ہيں کہ سرکاری اسکول ميں فرنيچر نہيں ہے۔ خريداری کےعمل کو بائی پاس کرکے فرنيچر نہيں کرسکتے، کسی کے پاس ثبوت ہے کہ من پسند ٹھيکيدار کو ٹھيکہ ديا تو سزا ملنی چاہيے۔

انہوں نے کہا کہ ابھی تک ایک بینچ نہیں آئی اور کہہ دیا گیا کہ کاٹھ کباڑ سے فرنيچر خريدا گيا، مختلف پرانی تصاوير ٹی وی چينلز پر چلائی گئيں۔ مجھے لگتا ہے سندھ حکومت کیخلاف باقاعدہ پلانٹڈ کمپين چلائی جارہی ہے۔ معاملے کی شفاف تحقيقات کی جائيں، پہلے لوکل فرنيچر و ديگر چيزیں خريدی جاتی تھيں۔

سعید غنی کا کہنا تھا کہ سردارشاہ کے دور ميں جو ٹينڈرہوا وہ منسوخ ہوگيا تھا، اس کےبعد معاملہ عدالت ميں چلا گيا،اسٹےآگيا۔ ٹرانسپرنسی انٹرنيشنل کی رپورٹ میں بھی کوئی اعتراض سامنے نہيں آيا۔ اخلاقی طور پر ٹرانسپرنسی انٹرنيشنل کو ايسی بات نہيں کرنی چاہيئے۔

حلیم عادل شیخ ساڑھے 5ہزار کی اسکول ڈیسک اسمبلی لے آئے

دوسری جانب وزير تعليم سندھ سردار شاہ نے کہا کہ مجھے اس پورے معاملے کا علم نہيں، دستاويزات ہمارے سامنے ہيں، بيٹھ کر ديکھيں گے۔ پروکيورمنٹ کميٹی سے بھی مليں گے۔

 پی ٹی آئی رہنما حلیم عادل شیخ کا کہنا ہے کہ ہم کہتے ہیں سارا ٹبرچور ہے وہ ثابت ہوگیا، نیب کا کام اب شروع ہوا ہے، اس پر کارروائی ہونی چاہیے۔ آج اس کرپشن پر نیب کو خط لکھ رہا ہوں، پوری صوبائی حکومت ملی ہوئی ہے ایک دوسرے پر الزام تراشی کرتے ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More