دلیپ کمار اور راج کپور کے گھروں کے حوالے سے اہم خبر

بول نیوز  |  Sep 26, 2021

خیبر پختونخوا حکومت نے بالی ووڈ کے لیجنڈری اداکار دلیپ کمار اور راج کپور کے پشاور میں موجود گھروں کی مرمت کا کام شروع کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق حکومتی منصوبے کے مطابق بالی ووڈ کے دونوں نامور اداکاروں کے گھروں کو ان کی اصل حالت میں بحال کیا جائے گا۔

خیبر پختونخوا حکومت نے اداکار دلیپ کمار اور راج کپور کے پشاور میں موجود گھروں کو اپنی تحویل میں لینے کے بعد اب ان باقاعدہ طور پر ان گھروں کی مرمت اور بحالی کا کام شروع کرنے کے لیے ابتدائی مرحلے میں دونوں گھروں کا ملبہ ہٹا دیا ہے۔

اس حوالے سے اداکار دلیپ کمار کے بھتیجے فواد اسحاق نے اپنے انکل اور اداکار راج کپور کے آبائی گھروں کی مرمت کروانے کے حکومتی فیصلے کی تعریف کی ہے۔

فواد اسحاق نے اداکار دلیپ کمار کی آبائی شہر پشاور سے محبت کے بارے میں بات کرتے ہوئے بتایا کہ دلیپ کمار کا پشاور سے لگاؤ کبھی کم نہیں ہوا۔

یاد رہے کہ بھارتی اداکار راج کپور کا آبائی گھر، جسے کپور حویلی کہا جاتا ہے اور دلیپ کمار کا آبائی گھر پشاور کے قصہ خوانی بازار میں واقع ہے۔

واضح رہے کہ  وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا کے معاون خصوصی برائے اطلاعات کامران بنگش نے کہا تھا ہے کہ صوبائی حکومت نے پشاور میں دلیپ کماراور راج کپور کے آبائی گھروں کو عجائب گھر میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس طرح کے منصوبوں کی بدولت ہم پشاور کو سیاحت اور ثقافت کا مرکز بنائیں گے۔

پشاور سے جاری ویڈیو بیان میں معاون خصوصی وزیر اعلیٰ برائے اطلاعات کامران بنگش کا کہنا ہے کہ حکومت کی یہ کوشش رہی ہے کہ صوبہ میں سیاحت کو فروغ ہو تاکہ صوبہ میں معاشی سرگرمیاں جاری رکھی جا سکیں۔

انہوں نے مزید کہا تھا کہ حکومت کا کائیٹ پراجیک بڑا کامیاب رہا ہے جس کے تحت پشاور میں دلیپ کمار کے آبائی گھراور راج کپور کی حویلی کو عجائب گھر میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ کامران بنگش نے کہا تھا کہ دونوں تاریخی گھروں کے لئے وزیراعلیٰ محمود خان نے 2 کروڑ 35 لاکھ روپے منظور بھی کردیے ہیں، جس سے دونوں گھروں کی خریداری کی جائے گی۔

انہوں نے کہا تھا کہ ایسے منصوبوں کی بدولت ہم پشاور کو سیاحت اور ثقافت کا مرکز بنائیں گے۔

Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More