حکومت پاکستان کا مذہبی تعلیم کے لیے نئے ڈائریکٹوریٹ کے قیام کا اعلان

اردو نیوز  |  Oct 14, 2021

حکومتِ پاکستان نے دینی تعلیم کے لیے ایک نیا ڈائریکٹوریٹ قائم کرنے کا اعلان کیا ہے اور ڈاکٹر غلام سرور کو اس کا سربراہ مقرر کیا ہے۔

اس ڈاریکٹوریٹ کا قیام ایک ایسے وقت سامنے آیا ہے جب وزیر اعظم عمران خان نے کچھ روز قبل کہا تھا کہ ان کی حکومت ایک ’رحمت اللعالمین اتھارٹی‘ قائم کرنے گی جو اسلام کی حقیقی تصویر پیش کرے گی، پیغمبرِ اسلام کی زندگی پر تحقیق کرے گی، میڈیا کا جائزہ لے گی اور سکول کے نصاب پر نظر رکھے گی۔  

وزیر اعظم نے اس نئی اتھارٹی کا اعلان گذشتہ ہفتے اسلام آباد میں ایک کانفرنس کے دوران کیا تھا، جو ربی الاول کا مہینہ شروع ہونے پر رکھی گئی تھی۔

وزیر اعظم نے کہا تھا کہ اس اتھارٹی میں عالمی سطح پر مانے جانے والے سکالرز شامل ہوں گے جو بچوں اور بڑوں کو پیغمبرِ اسلام کی سنت کے بارے میں بتائیں گے اور دنیا کو، خاص طور پر مغرب کو، بتائیں گے کہ اسلام امن اور انسانیت کا پیغام دیتا ہے۔  

حکومت پہلے ہی سے اس اتھارٹی کے لیے سربراہ کی تلاش میں تھی، جسے پیغمبرِ اسلام کی سنت کا علم ہو اور اس نے اس بارے میں ریسرچ بھی کی ہو۔

اب حکومت نے ’ڈائریکٹوریٹ جنرل برائے مذہبی تعلیم‘ کی اس پوزیشن پر ڈاکٹر غلام سرور کو تعینات کرلیا ہے۔

بدھ کو پاکستان کی وزارت تعلیم نے ایک نوٹیفکیشن جاری کیا جس کے مطابق وزارت تعلیم اور پروفشنل ٹریننگ، اسلام آباد کے زیر سایہ ڈائریکٹوریٹ جنرل برائے مذہبی تعلیم میں ڈاکٹر غلام سرور نے پراجیکٹ ڈائریکٹر کی پوسٹ سنبھال لی ہے۔

اس اتھارٹی میں عالمی سطح پر مانے جانے والے سکالر شامل ہوں گے جو بچوں اور بڑوں کو پیغمبرِ اسلام کی سنت کے بارے میں بتائیں گے۔ فائل فوٹو: اے ایف پینوٹیفکیشن میں مزید لکھا گیا تھا کہ ڈاکٹر غلام سرور کو جون 2022 تک کانٹریکٹ پر تعینات کیا گیا  ہے۔

10 اکتوبر کو کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ وہ خود رحمت اللعالمین اتھارٹی کے ’پٹرن‘ ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’[سکولرز] جائزہ لیں گے کہ کیسے [بچے] پڑھائی کررہے ہیں، آیا [نصاب] میں رد و بدل کی ضرورت ہے یا نہیں۔ سکالرز کے مابین بات چیت ہوگی۔‘

انہوں نے مزید کہا تھا کہ یہ اتھارٹی یونیورسٹیز میں تحقیق کرے گی اور تجویز کرے گی کہ معاشرے کو اسلام کے مطابق لانے کے لیے کیا تبدیلیاں درکار ہیں۔  

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More