اسلام جبری مذہب تبدیلی کو قبول نہیں کرتا، مولانا طاہر اشرفی

بول نیوز  |  Nov 25, 2021

وزیراعظم کے معاون خصوصی مولانا طاہر اشرفی کا کہنا ہے کہ اسلام جبری مذہب تبدیلی کو قبول ہی نہیں کرتا۔

ایرڈ ایگریکلچر یونیورسٹی کی سلور جوبلی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی برائے بین المذاہب وہم آہنگی مولانا طاہر اشرفی کا کہنا تھا کہ آج پاکستان اور دنیا کے حالات میں طلبہ کا کردار انتہائی اہم ہے۔

مولانا طاہر اشرف کا کہنا تھا کہ ہمیں پاکستان، امت مسلمہ اور دنیا بھر میں انصاف قائم کرنا ہے، جو معاشرہ انصاف پر قائم ہوجائے اسے کوئی نہیں گراسکتا، مذہبی، ہم آہنگی کے لیے، اسلام نے بتادیا تمہارے لیے تمہارا اور میرے لیے میرا دین ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی نے کہا کہ پاکستان میں اقلیتیں دنیا کے بہت سے ممالک سے اچھی ہیں ، غلطیاں کوتاہیاں ہوجاتیں ہیں لیکن بطور حکومت کبھی ایسے معاملات کی پشت پناہی نہیں کی گئی۔

مولانا طاہر اشرفی کا کہنا تھا کہ پاکستان میں اسلام خانقاہوں سے پھیلا ، پاکستان کلمے کے نام پر بنا ہے اس میں ناموس رسالت کا کوئی مسئلہ نہیں ، اس ملک میں ناموس کے معاملے پر مولویوں سے زیادہ بغیر داڑھی والے سینہ تان کر گولی کھاتے ہیں ، تاریخ دیکھ لیں۔

معاون خصوصی نے مزید کہا کہ جہیز نہ ہونے وجہ سے والدین بیٹیوں کی شادیاں نہیں کرسکتے، نوجوان فیصلہ کریں کہ انہوں نے جہیز نہیں لینا جب کہ جبری دین کی تبدیلی کی بات کی جاتی ہے، اسلام جبری مذہب تبدیلی کو قبول ہی نہیں کرتا ، اپنا مسلک کو چھوڑیں نہیں اور دوسروں کا مسلک چھیڑیں نہیں۔

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More