ایم کیو ایم اور فنکشنل لیگ کا سندھ کیلئے ہم آواز ہونے کا اعلان

بول نیوز  |  Dec 05, 2021

سندھ حکومت کے متعصبانہ بلدیاتی بل کے خلاف متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سیاسی رابطوں کا تسلسل جاری ہے، ایم کیو ایم وفد نے مسلم لیگ فنکشنل سے ملاقات کے لیے راجہ ہاوس کا دور کیا ہے۔

وفد میں ایم کیو ایم رہنما عامر خان، وسیم اختر اور وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کے مشیر حسین شاہ شامل ہیں جبکہ فنکشنل لیگ کی قیادت صدر مسلم لیگ فنکشنل صدر الدین شاہ راشدی عرف یونس سائیں نے کی۔

ملاقات میں بلدیاتی قانون کی مخالفت اور پیپلز پارٹی کے اقدامات کے خلاف مشترکہ جدوجہد کرنے پر مشاورت کی گئی۔

ایم کیو ایم نے فنکشنل لیگ کو گیارہ دسمبر کی آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی، یونس سائیں نے دعوت قبول کرتے ہوئے شرکت کی یقین دہانی کرادی۔

اس موقع پر صدر مسلم لیگ فنکشنل صدر الدین شاہ راشدی نے کہا کہ ہمیں مستقبل میں مل کر پورے سندھ کی بات کرنی ہوگی، وقت آگیا ہے کہ سندھ اور پاکستان کے لئے مل کر بات کرنی ہوگی، کیس عدالت میں ہے، ہمیں انتظار ہے، ایم کیو ایم والوں کا شکریہ کہ انہوں نے اے پی سی میں شرکت کی دعوت دی۔

انہوں نے کہا کہ ملاقات میں گرم سرد باتیں ہوئیں، ہم شرکت ضرور کریں گے، مستقبل میں ہم ایک پلیٹ فارم پر مل کر پورے سندھ کی بات کریں گے۔ ذراعت ، ٹرانسپورٹ ، ایجوکیشن ، ہیلتھ ، بے روزگاری اور مہنگائی پر مل کر جدوجہد کی بات ہوئی۔

ایم کیو ایم رہنماء عامر خان نے کہا کہ پیپلز پارٹی والے اسپتال ، تعلیمی ادارے ، برتھ و ڈیتھ سرٹفکیٹ کی فیس پر بھی قابض ہوگئے ہیں۔ پیرپگارا کے پاس سب معاملات لے کر آئے، انہوں نے ساتھ دینے کی یقین دہانی کرائی، گیارہ دسمبر کو اے پی سی ہم نے بلائی ہے، سندھ حکومت نے پورے سندھ کے بلدیاتی اداروں کے حقوق پر ڈاکہ ڈالا، اگر بلدیاتی اداروں کو اختیارات ملیں گے تو اندرون سندھ میں بھی لوگ اختیارات کی بات کرتے ہیں۔

عامر خان کا کہنا تھا کہ سندھ کی تباہی کے پیچھے پیپلز پارٹی ہے، پیپلز پارٹی نے سندھ میں لوٹ کھسوٹ کا بازار گرم کر رکھا ہے، یہ بل پورے سندھ کے ساتھ انصافی ہے، ہم مل کر اس پر آواز  بھی بلند کریں گے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ تیرہ سالوں سے اس صوبے کو جعلی اکثریت سے چلایا جارہا ہے، اندرون سندھ کتوں کے کاٹنے کی ویکسین نہیں، سندھ آثار قدیمہ کا منظر پیش کررہا ہے۔ امن و امان کی صورتحال خراب ہوتی جارہی ہے۔

ایم کیوم ایم رہنما نے سوال اٹھایا کہ کیا سعید غنی بل پاس کرانے کے بعد بات کریں گے؟ ہم نے اپنی تجاویز دیں لیکن انہوں نے نہیں سنی، سعید غنی صاحب یہ آمرانہ سوچ ہے جس کے ہم خلاف ہیں، تحریک انصاف سے ہمارے شکوے ہیں، ہماری امید کی انتہا ہوتی جارہی ہے، اتحاد ہے کب تک چلتا ہے، دیکھتے ہیں۔

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More