نوواک جوکووچ: آسٹریلیا نے ویزا منسوخی کی اپیل کی سماعت سے قبل ٹینس کھلاڑی کو حراست میں لے لیا

بی بی سی اردو  |  Jan 15, 2022

نوواک جوکووچ
Getty Images

آسٹریلیا کی حکومت نے کورونا ویکسین سے استثنیٰ کے تنازعے پر دنیا کے نمبر ایک ٹینس کھلاڑی نوواک جوکووچ کی ویزا منسوخی کی اپیل کی عدالتی سماعت سے قبل، انھیں حراست میں لے لیا ہے۔ اس سماعت میں اس بات کا تعین کیا جائے گا کہ آیا ٹینس سٹار بنا ویکسین لگوائے ملک میں رہ سکتے ہیں یا نہیں۔

آسٹریلین حکومت کی جانب سے دوسری ویزا منسوخی کے بعد سربیا سے تعلق رکھنے والے 34 سال کے کھلاڑی کو ملک بدری کا سامنا ہے اور حکومت نے انھیں عوام کے لیے خطرہ قرار دیا تھا۔

جوکووچ کے وکلا نے ان کے ویزا منسوخی کے فیصلے کو ’غیر معقول‘ قرار دیا ہے اور وہ اس کے خلاف اپیل کر رہے ہیں جس کی سماعت اتوار کو ہو گی۔

جوکووچ کا نام اب بھی پیر کو میلبورن میں آسٹریلین اوپن کھیلنے والے کھلاڑیوں کی فہرست میں شامل ہے۔

جوکووچ کا ریکارڈ خطرے میں؟

نو بار آسٹریلیئن اوپن جیتنے والے نوواک جوکووچ نے اس بار ٹائٹل کا دفاع کرنا تھا اور اگر وہ دسویں بار آسٹریلیئن اوپن جیت جاتے تو 21 گرینڈ سلیم ٹائٹلز کے ساتھ دنیا کے کامیاب ترین مرد ٹینس کھلاڑی بن جاتے۔

اتوار کو ہونے والی سماعت کا وقت 09:30 (سنیچر 22:30 GMT) بہت اہم ہے کیونکہ یہ جوکووچ کے مقابلے میں حصہ لینے سے محض چند گھنٹے قبل ہو رہی ہے۔

اگر اپیل کا فیصلہ نوواک کے خلاف آتا ہے تو دنیا میں مردوں کے نمبر ون ٹینس کھلاڑی کو ملک بدری اور تین سال تک ویزا پابندی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

جوکووچ
Getty Images
آسٹریلین اوپن کھیلنے کے لیے میلبورن پہنچنے کے بعد جوکووچ کو آسٹریلیا میں داخل ہونے سے روک دیا گیا تھا

سنیچر کو آن لائن سماعت کے فوراً بعد جوکووچ کے وکلا نے تصدیق کی کہ وہ میلبورن کے امیگریشن حراستی مرکز میں رات گزاریں گے۔

سماعت کے موقع پر جسٹس ڈیوڈ او کالاگھن نے اتوار کی کارروائی کا وقت مقرر کیا لیکن ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ یہ فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے کہ آیا اس کی سماعت ایک جج کرے گا یا تینوں ججوں پر مشتمل مکمل عدالت۔

اس سے قبل آسٹریلیا کی حکومت نے نمبر ون ٹینس سٹار نوواک جوکووچ کا ویزا دوسری مرتبہ منسوخ کر دیا تھا۔

کہا جا رہا تھا کہ اس فیصلے کے بعد ٹینس سٹار ایک مرتبہ پھر عدالتی سہارا لے سکتے ہیں۔ واضح رہے کہ اس سے پہلے عدالت نے آسٹریلیا کی حکومت کی جانب سے نوواک جوکووچ کا ویزا منسوخ کرنے کے پہلے فیصلے کو کالعدم قرار دیا تھا۔

آسٹریلیا کے وزیر برائے امیگریشن الیکس ہاک کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا تھا کہ انھوں نے نوواک جوکووچ کا ویزا منسوخ کرنے کا فیصلہ مفاد عامہ اور صحت کی وجوہات کی بنا پر کیا ہے۔

جوکووچ
Getty Images
فیصلے کے تحت جوکووچ کا ویزا منسوخ کرنے والا حکم فوری طور پر 'منسوخ' کر دیا گیا ہے

اس فیصلے کے بعد یہ بھی کہا جا رہا تھا کہ جوکووچ پر آسٹریلیا کا نیا ویزا حاصل کرنے کی کوشش پر تین سال کی پابندی بھی عائد ہو سکتی ہے تاہم آسٹریلیا کی حکومت کے پاس اختیار ہے کہ وہ چاہیں تو اس پابندی کو ختم کر دیں۔

واضح رہے کہ جوکووچ چھ جنوری کو میلبورن پہنچے تھے جہاں آسٹریلیا کی بارڈر فورس نے کورونا ویکیسن سے استثنیٰ کا کوئی ٹھوس ثبوت پیش نہ کیے جانے کے بعد ان کا ویزا منسوخ کر دیا تھا۔

جوکووچ کا کہنا تھا کہ وہ ویکسینیشن کے خلاف ہیں اور انھیں اس ٹورنامنٹ میں کھیلنے کے لیے طبی طور پر استثنیٰ دیا گیا تھا جس پر بہت سے آسٹریلوی مشتعل تھے۔

آسٹریلیا میں شہریوں کی جانب سے بھی غم و غصے کا اظہار کیا گیا کہ ایک شخص کو بنا ویکسین لگوائے کیسے ملک میں داخل ہونے کی اجازت دی جا سکتی ہے جبکہ ملک کے عوام سخت اور طویل لاک ڈاون میں زندگی گزار چکے ہیں۔

جوکووچ کے وکلا نے کہا تھا کہ انھیں ملک میں داخل ہونے کے لیے عارضی ویزا دیا گیا تھا اور حال ہی میں ہونے والے انفیکشن کی وجہ سے انھیں ٹینس آسٹریلیا کی جانب سے 'کووڈ ویکسینیشن سے مستثنیٰ قرار دیا گیا تھا۔‘

https://twitter.com/DjokerNole/status/1471843717271150592

جوکووچ کے طبی استثنیٰ کا سرٹیفکیٹ ٹینس آسٹریلیا کے زیر اہتمام ایونٹ کو چلانے والے دو آزاد میڈیکل پینلز اور ریاست وکٹوریہ نے دیا تھا۔

جوکووچ کو کئی گھنٹے تک میلبورن ایئرپورٹ پر امیگیریش حکام نے حراست میں رکھا گیا تھا جس کے بعد انھیں ایک امیگریشن ہوٹل منتقل کیا گیا تھا۔ چند ہی دن بعد عدالت کی جانب سے ان کا ویزا منسوخ کرنے کے فیصلے کو کالعدم قرار دیتے ہوئے ان کی رہائی کا حکم بھی جاری کیا گیا تھا۔ عدالت نے قرار دیا تھا کہ بارڈر حکام نے درست طریقے سے فیصلہ نہیں لیا۔

یہ بھی پڑھیے

’جوکووچ اب ٹائٹل کا دفاع تو نہیں مگر ویکسین کے ذریعے اپنا دفاع ضرور کر سکتے ہیں‘

دوران پرواز کورونا کی تشخیص: سکول ٹیچر کا طیارے کے ٹوائلٹ میں قرنطینہ کا تجربہ

اومیکرون کی علامات کیا ہیں اور اس سے بچاؤ کا بہترین طریقہ کیا ہے؟

اس فیصلے کے بعد اس خدشے کا اظہار کیا جا رہا تھا کہ آسٹریلیا کی حکومت ایک بار پھر نوواک جوکووچ کا ویزا منسوخ کر سکتی ہے اور ایسا ہی ہوا۔ جمعے کے دن آسٹریلیا کے وزیر برائے امیگریشن الیکس ہاک نے آسٹریلیا امیگریشن ایکٹ کے تحت ان کا ویزا دوسری بار منسوخ کر دیا۔

اس ایکٹ کے تحت آسٹریلیا کے وزیر برائے امیگریشن کے پاس یہ اختیار موجود ہے کہ وہ کسی بھی شخص کو آسٹریلیا کی عوام کی صحت، تحفظ اور امن و امان کے لیے خطرہ سمجھیں تو اسے ملک بدر کر سکتے ہیں۔ جوکووچ کے پاس اس فیصلے کے خلاف اپیل کرنے کا بھی حق موجود ہے۔

جوکووچ
Getty Images
آسٹریلین اوپن کا آغاز 17 جنوری سے میلبرن میں ہو رہا ہے

اس سارے تنازعے کے دوران جوکووچ پر یہ الزام بھی لگا کہ ان کی جانب سے جعلی حلف نامہ جمع کروایا گیا جس میں کہا گیا تھا کہ انھوں نے آسٹریلیا آمد سے 14 دن قبل تک کہیں کا سفر نہیں کیا حالانکہ وہ اس دوران سپین کا سفر کر چکے تھے۔

جوکووچ کی جانب سے ردعمل میں کہا گیا تھا کہ ان کے ٹریول ایجنٹ نے غلطی سے یہ حلف نامہ جمع کروایا تھا اور ایسا جان بوجھ کر نہیں کیا گیا۔ جوکووچ کی جانب سے یہ اعتراف بھی کیا گیا تھا کہ انھوں نے کورونا کی تصدیق ہونے کے بعد بھی ایک صحافی سے ملاقات کی اور فوٹو شوٹ میں حصہ لیا۔

آسٹریلیا کے وبائی امراض کے سرحدی قوانین ایسے غیر ملکیوں کے ملک میں داخلے پر پابندی لگاتے ہیں جنھیں یا تو ڈبل ویکسین نہیں لگی یا انھیں ویکسین لگوانے سے چھوٹ حاصل ہے۔

غیر ملکی افراد آن لائن ویزا پر آسٹریلیا جا سکتے ہیں مگر اس کے بعد انھیں ہوائی اڈے پہنچنے پر امیگریشن کسٹمز سے گزرنا ہوتا ہے۔

یاد رہے آسٹریلیئن اوپن کا آغاز 17 جنوری سے میلبورن میں ہو رہا ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More