ملک کو سری لنکا نہ بنایا جائے، اعظم سواتی

بول نیوز  |  May 16, 2022

سابق وزیر ریلوے سینٹر اعظم سواتی نے کہا ہے کہ ملک کو سری لنکا نہ بنایا جائے۔

پریس کانفرنس کرتے ہوئے سابق وزیر ریلوے اعظم سواتی نے کہا کہ عمران خان کی زندگی کو خطرات لاحق ہیں، پوری قوم سابق وزیر اعظم کی ایک کال پر اپنی جان ان پر قربان کرنے کو تیار ہے۔

 سابق وزیر ریلوے کا کہنا تھا کہ ملک کو سری لنکا نہ بنایا جائے، ایک ملزمہ کو و یزا دینے کے لئے چار مرتبہ ہائی کورٹ کا بینچ توڑا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عدالتی نظام کی درستگی سے الیکشن کمشن اسٹبلشمنٹ اور دیگر ریاستی اداروں کی درستگی وابسطہ ہے، نااہل وزیر خزانہ اور  وزیر داخلہ کی وجہ معاشی و اقتصادی تباہی شروع ہوئی۔

اعظم سواتی نے کہا کہ ڈالر ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ چکا ہے، ہمارا ایٹمی پروگرام ہماری شہ رگ ہے اسکی طرف اٹھنے والی ہر انگلی کاٹ دی جائے۔

انہوں نے کہا کہ ہم لوٹیروں اور چوروں کو اپنے ترقیاتی منصوبوں پر تختیاں لگانے سے آہنی ہاتھوں سے روکیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ موجود چور قیادت کی وجہ سے ملک غلامی کی طرف جا رہا ہے۔

مزید پڑھیں14 mins agoپی این ایس شمشیر کا عمان کی بندرگاہ مسقط کا دورہ

پاک بحریہ کے جہاز پی این ایس شمشیر کا عمان کی بندرگاہ...

19 mins agoجس نے بھی عمران خان کو گرفتار کیا اس کا پاکستان میں رہنا مشکل ہو جائے گا ، فواد چوہدری

سابق وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہے کہ جس نے...

22 mins agoوزیرِ اعظم کی عمران خان کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے کی ہدایت

وزیرِ اعظم شہباز شریف کی جانب سے چیئرمین پی ٹی آئی عمران...

22 mins agoپی ٹی آئی کی الیکشن کمیشن کو نوٹس جاری کرنے کی استدعا مسترد

سپریم کورٹ نے تحریک انصاف کے وکیل کی الیکشن کمیشن کو نوٹس...

30 mins agoماں بیٹی سے زیادتی کا کیس انسداد دہشتگردی کی عدالت کے دائرہ اختیار سے باہر قرار

لاہور ہائی کورٹ نے چوہنگ میں ماں بیٹی سے زیادتی کا کیس...

46 mins agoسینئراینکرپرسن سمیع ابراہیم عدالت میں پیش، اسلام آباد ہائیکورٹ نے درخواست نمٹا دی

عدالت نے ریمارکس دیے کہ سمیع ابراہیم نےاپنی پٹیشن میں حفاظتی ضمانت...

تازہ ترین نیوز پڑہنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کریں بول نیوزایپ

General Rectangle – 300×250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More