سپریم کورٹ میں آرٹیکل تریسٹھ اے کی تشریح سے متعلق صدارتی ریفرنس پر سماعت

بول نیوز  |  May 16, 2022

سپریم کورٹ میں آرٹیکل تریسٹھ اے کی تشریح سے متعلق صدارتی ریفرنس پر سماعت جاری ہے۔

چیف جسٹس عمرعطا بدیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا پانچ رکنی لارجربنچ کیس کی سماعت کررہا ہے۔

سماعت کے دوران ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامررحمان عدالت میں پیش ہوئے اورعدالت سے کہا کہ اٹارنی جنرل کو لاہورمیں تاخیرہوگئی ہے۔ اٹارنی جنرل اشتراوصاف لاہور سے اسلام آباد کے لیے روانہ ہوچکے ہیں۔

جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ اٹارنی جنرل کس ٹرانسپورٹ پر اسلام آباد آرہے ہیں، عامر رحمان نے جواب دیا کہ اٹارنی جنرل موٹروے سے اسلام آباد آرہے ہیں، 3 بجے تک پہنچ جائیں گے۔

اسسٹنٹ اے جی نے عدالت کو بتایا کہ پنجاب کے معاملات کی وجہ سے اٹارنی جنرل لاہور میں مصروف ہوگئے تھے۔

تحریک انصاف کے وکیل بابر اعوان نے کہا کہ ہم نے کبھی اعتراض نہیں کیا کہ اٹارنی جنرل آرہے ہیں یا جارہے ہیں، یہ سنتے دو ہفتے ہوگئے ہیں۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ ایسا کام نہ کریں جس سے کوئی اور تاثر ملے۔ اٹارنی جنرل نے پیر کو دلائل میں معاونت کرنے کی بات خود کی تھی۔

چیف جسٹس عمرعطابندیال نے کہا کہ مخدوم علی خان کو بھی آج دلائل کیلئے پابند کیا تھا۔

مزید پڑھیں3 mins agoامپورٹڈ حکومت نے خفیہ مراسلے کی حقیقت تسلیم کی ہے، شیریں مزاری

پاکستان تحریک انصاف کی رہنما اور سابق وفاقی وزیر انسانی حقوق شیریں...

10 mins agoوزیراعظم کی صوبوں کو گندم کی خریداری کا ہدف مکمل کرنے کی ہدایت

وزیراعظم شہباز شریف کی جانب سے صوبوں کو گندم کی خریداری کا...

11 mins agoلاہور ایئرپورٹ پر مسافروں سے منشیات برآمد

لاہور ایئرپورٹ پر کی گئی کارروائی میں مسافروں سے منشیات برآمد کرلی...

12 mins agoجعلی ڈومیسائل کا معاملہ، خواجہ اظہارکی مذاکراتی کمیٹی کے ٹی اوآرطلبی پرمخالفت

جعلی ڈومیسائل بنانے کے کیس میں سماعت کے دوران خواجہ اظہارکی جانب...

19 mins agoپنجاب میں بھی ہیضے کی وبا نے پنجے گاڑ لیے، 500 سے زائد کیسز رپورٹ

صوبہ پنجاب میں بھی ہیضے کی وبا نے پنجے گاڑ لیے ہیں۔...

21 mins agoجو لوگ اس ملک کی ترقی نہیں چاہتے وہ دہشت گردی میں ملوث ہیں، اسماعیل راہو

وزیر برائے جامعات اسماعیل راہو نے کہا ہے کہ جو افراد اس...

تازہ ترین نیوز پڑہنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کریں بول نیوزایپ

General Rectangle – 300×250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More