تھائی لینڈ: ڈے کیئر سینٹر پر سابق پولیس افسر کے حملے میں 23 بچوں سمیت 38 ہلاک

بی بی سی اردو  |  Oct 06, 2022

Reuters

تھائی لینڈ میں پولیس کا کہنا ہے کہ ایک چائلڈ ڈے کیئر سینٹر پر ایک سابق پولیس اہلکار کے حملے میں 23 بچوں سمیت کم از کم 38 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ پولیس نے ایک پریس کانفرنس میں اس کی تصدیق کی ہے کہ اس حملے میں مرنے والوں کی تعداد 38 ہو گئی ہے۔

اس حملے میں 12 افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔ انھیں نونگ بوا لامفو کے ضلعی ہسپتال میں طبی امداد فراہم کی جا رہی ہے۔

مقامی میڈیا نے واقعے کے فوری بعد خون کے عطیات کے لیے عوام سے اپیل کی تھی بعد ازاں ہسپتال کی جانب سے بتایا گیا کہ اب مزید خون کی ضرورت نہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس حملے کے بعد جب ملک کے شمال مشرقی صوبے نونگ بوا لامفو میں ملزم کی تلاش کے لیے آپریشن کیا گیا تو حملہ آور نے اپنے اہلخانہ کو ہلاک کرنے کے بعد خودکشی کر لی۔

پولیس نے حملہ آور کی شناخت پانیا کمرب کے طور پر کی ہے جسے واقعے کے بعد ایک سفید ٹویوٹا پِک اپ ٹرک میں فرار ہوتے دیکھا گیا جس پر بینکاک کی رجسٹریشن پلیٹ نصب تھی۔

پولیس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ حملہ آور نے بچوں اور بالغ افراد پر گولیاں چلائیں اور ان پر چاقو سے وار کیے۔ حملہ آور کا مقصد غیر واضح ہے تاہم اسے گذشتہ برس نوکری سے برخاست کیا گیا تھا۔

پولیس کے ترجمان نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ حملہ آور پر نشہ کرنےکے الزامات تھے اور اسی حوالے سے وہ عدالت میں پیشی پر بھی گیا تھا۔

انھوں نے بتایا کہ سابق افسر کو نشہ آور ادویات کے استعمال کی وجہ سے پولیس کی نوکری سے نکال دیا گیا تھا۔

حملہ آور کے حوالے سے موصول ہونے والی مزید تفصیلات کے حوالے سے ملک کے سرکاری نشریاتی ادارے کا کہنا ہے کہ کہ اس کے پاس حملے کے لیے موجود آلات میں شوٹنگ گن، پستول اور چھری موجود تھی۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق صوبے کے ایک سینیئر پولیس افسر نے بتایا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں 23 بچے شامل ہیں۔ بتایا گیا ہے کہ سب سے کم عمر بچے کی عمر دو سال ہے۔

ایک مقامی افسر جداپا بونسم نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ حملہ آور دوپہر کے وقت آیا اور پہلے چائلڈ کیئر سینٹر کے عملے کے چار سے پانچ ارکان کو گولیاں ماریں۔

Reuters

’پہلے لوگ سمجھے کہ آتش بازی ہو رہی ہے۔ پھر حملہ آور زبردستی اس کمرے میں گھس گیا جہاں بچے سو رہے تھے۔‘

پولیس نے بتایا ہے کہ حملہ آور نرسری میں اپنے بچے کو دیکھنے آیا لیکن بچے کو وہاں نہ پا کر وہ مشتعل ہو گیاگ

پولیس ترجمان کا کہنا ہے کہ حملہ آور نے گھر واپس آنے سے پہلے اپنی گاڑی کو وہاں باہر کھڑے افراد پر چڑھا دیا۔ گھر آ کر اس نے اپنی بیوی اور بچے کو بھی مار دیا۔

31 سالہ عینی شاہد پوینا ہے نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ان کا سامنا حملہ آور سے ہوا جو کہ حملے کے بعد گاڑی کو بے ہنگم انداز میں چلا رہا تھا۔

وہ کہتی ہیں کہ `وہ سڑک پر موجود دیگر لوگوں کو کچل دینا چاہتا تھا۔ اس نے موٹر سائیکل سے گاڑی ٹکرائی جس کے نتیجے میں دو افراد زخمی ہو گئے۔ میں جلدی سے اس کے راستے سے ہٹی۔‘

ان کا یہ بھی کہنا ہے کہ گن مین علاقے میں نشے کے عادی فرد کے طور پر جانا پہچانا شخص تھا۔

Getty Imagesتھائی لینڈ کے وزیراعظم پریوتھ چان-اوچا نے اس واقعے کو ایک دل دہلا دینے والا واقعہ قرار دیا ہے

تھائی لینڈ کے وزیراعظم پریوتھ چان-اوچا نے اس واقعے کو ایک دل دہلا دینے والا واقعہ قرار دیا ہے۔ انھوں نے فوری طور پر واقعے کی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔

وزیراعظم کا پیغام فیس بک پر پوسٹ کیا گیا ہے جس میں انھوں نے پولیس کمانڈر کو حکم دیا ہے کہ وہ تیزی سے تحقیقات کریں کہ یہ اندھوناک واقعہ کیسے ہوا۔

تھائی لینڈ میں بڑے پیمانے کے پُرتشدد واقعات کم ہی دیکھے گئے ہیں۔ سنہ 2020 کے دوران ایک فوجی اہلکار نے ناکھون راتچاسیما نامی شہر میں 21 افراد کو قتل اور درجنوں کو زخمی کیا تھا۔

اس خبر کو مزید اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے۔۔۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More