سپریم کورٹ کا پاناما عملدرآمد کیس میں آج ہی جے آئی ٹی بنانے کا فیصلہ

اب تک  |  May 05, 2017

سپریم کورٹ کا پاناما عملدرآمد کیس میں آج ہی جے آئی ٹی بنانے کا فیصلہاسلام آباد(5 مئی 2017) سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل کی توسط سے اداروں کو آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ اوور اسمارٹ نہ بنیں ہمیں میڈیا سمیت تمام اداروں کو کنٹرول کرنے کا ہنر آتا ہیں بس آزادی صحافت کو مقدم رکھ رہے ہیں  پاناما کیس پر آج ہی جے آئی ٹی بنائیں گے عدالتی حکم نامے کے زریعے تمام اداروں کو آگاہ کردیا جائے گا۔سپریم کورٹ کے خصوصی بینچ نے پاناما کیس کی جے آئی ٹی کی تشکیل کے لئے سماعت کی اس موقع پر چیئرمین ایس ای سی پی اور گورنر اسٹیٹ بینک اٹھارہ گریڈ کے تمام افسران کی فہرست لے کر عدالت میں پیش ہوئے ۔دوران سماعت خصوصی بینچ میں شامل جسٹس عظمت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ اسٹیٹ بینک اور ایس ای سی پی کی جانب سے بھیجے گئے نام مستند نہیں تھے کیونکہ یہ سیاسی وابستگی رکھتے تھے جس پرعدالت کو تحفظات تھے اس لئے انہیں مسترد کیا گیا اس موقع پر جسٹس عظمت نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ جے آئی ٹی کے لئے بھیجے گئے نام عدالت عظمٰی سے لیک نہیں ہوئے یہ اداروں کی جانب سے افشاں کئے گئے اداروں کی جانب سے بھجوائے گئے ناموں کا علم تو چیف جسٹس ، رجسٹرار آفس اور سپریم کورٹ کے عملے کو بھی نہ تھا۔دوران سماعت اٹارنی جنرل نے خصوصی بینچ کو بتایا کہ آج کل میڈیا پر لوگوں کے کردار پر بحث ہورہی ہیں لہذا سپریم کورٹ عدالتی کاروائی کو میڈیا پر بحث کرنے پر پابندی لگائے جس پر جسٹس عظمت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ ہمیں سوشل میڈیا اور میڈیا کو قابو کرنا آتا ہے جس نے بھی عدالت کو گمراہ کرنے کی کوشش کی اس سے بھی نمٹ لیا جائے گا  لیکن آزادی صحافت بھی ہمارے لئے مقدم ہے۔اسی معاملے پر ریمارکس دیتے ہوئے خصوصی بینچ کے رکن جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ ہم تحمل اور بردباری کا مظاہرہ کررہے لیکن ساتھ ہی سب کو وارننگ بھی دے رہے ہیں کہ جے آئی ٹی ہم نے تشکیل دینی ہےکسی نے جھوٹ یا غلط بیانی کی تو قانون کے مطابق نمٹنا جانتے ہیں ۔جسٹس اعجاز الاحسن کا مزید کہنا تھا کہ ایک سیاستدان نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ پانچوں ججز نے نوازشریف کو جھوٹا قرار دیا ہم نے کچھ ایسا نہیں کہا لوگوں نے مجھ سمیت میرے ساتھی ججز پر باتیں کیں فریقین جتنا شور مچانا چاہتے ہے مچالیں ہمیں اس سے غرض نہیں ہم تحمل اور بردباری کا مظاہرہ کررہے ہیں پاناما کے معاملے پر ہم بہت زیادہ محتاط ہیں ہمیں قانون پر عملدرآمد کرنا ہے لوگ اور میڈیا جو کہتے ہیں اس سے کوئی غرض نہیں بتایا جائے کہ جے آی ٹی کو متنازعہ بنانے کا فائدہ آخرکار کس کو ہوگا ایک سیاسی لیڈر نے کہا کہ جسٹس اعجاز الاحسن نے نواز شریف کو جھوٹا قرار دیا اس لیڈر نے قوم سے جھوٹ بولا ہے ہم تحمل سے کام کر رہے ہیں ہمارے صبر کا امتحان نہ لیا جائے ہم نے قانون اور آئین کا حلف اٹھایا ہے اس کے مطابق فیصلہ دیں گے۔دوران سماعت خصوصی بینچ نے کہا کہ پاناما پر جے آئی ٹی کا قیام آج ہی لایاجائے گا اور عدالتی فیصلے کے زریعے اس کا اعلان کردیا جائے گا ۔مزید پڑھیںپاناماکیس:چیف جسٹس نے جے آئی ٹی کے لیے تین رکنی خصوصی بینچ تشکیل دے دیایہ بھی پڑھیںپاناما کیس جے آئی ٹی، سپریم کورٹ نے نام مسترد کردئیے
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More