اوپن بیلٹ کیس: سپریم کورٹ اپنی رائے کے اظہار کے لیے کیا طریقہ اپنائے گی؟

اردو نیوز  |  Feb 26, 2021

پاکستان کی سپریم کورٹ نے سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ سے کرائے جانے کے حوالے سے صدارتی ریفرنس کی 17 سماعتوں کے بعد جب رائے محفوظ کر لی ہے تو سب سے زیادہ پوچھا جانے والا سوال یہ ہے کہ سپریم کورٹ اپنی رائے کا اظہار کس طرح کرے گی؟

جمعرات کو جب ریفرنس کی سماعت ختم ہوئی تو وکلاء، صحافیوں اور کیس کے فریقین کا تجسس بھی یہی تھا کہ عدالت عموماً اس طرح کے کیس کا فیصلہ تو کھلی عدالت میں بڑے اہتمام کے ساتھ سناتی ہے۔ یہ کیس نہیں بلکہ ریفرنس ہے اور صدر مملکت کی جانب سے ایک آئینی سوال اٹھایا گیا ہے جس پر عدالت نے جواب دینا ہے۔

اس لیے سب یہ جاننے کی کوشش میں تھے کہ کسی طرح معلوم ہو سکے کہ عدالت کب اور کیسے اپنی رائے کا اظہار کرے گی۔

اس ریفرنس میں پیپلز پارٹی کے وکیل میاں رضا ربانی نے اردو نیوز کو بتایا کہ ’میں اس معاملے پر واضح نہیں بتا سکتا۔ یہ عدالت کی صوابدید ہے کہ وہ اپنی رائے صدر کو بھجوا دے یا پھر کھلی عدالت میں پڑھ کر بتا دے۔‘

رضا ربانی نے  بتایا کہ ’یہ عدالت کی صوابدید ہے کہ وہ اپنی رائے صدر کو بھجوا دے یا پھر کھلی عدالت میں پڑھ کر بتا دے‘ (فوٹو بشکریہ فہیم صدیقی)اردو نیوز نے اٹارنی جنرل خالد جاوید خان سے بھی دریافت کیا کہ عدالت نے انھیں آگاہ کیا ہے کہ وہ اپنی رائے کا اظہار کب یا کیسے کرے گی؟ تو انھوں نے جواب دیا کہ ’باضابطہ طور پر عدالت کی جانب سے ابھی تک کچھ نہیں بتایا گیا۔ یہ عدالت کی صوابدید ہے کہ وہ کون سا طریقہ اختیار کرتی ہے۔‘

ماضی میں کسی ریفرنس پر رائے دینے کے لیے سپریم کورٹ نے کون سا طریقہ اختیار کیا ہے؟ اس حوالے سے اٹارنی جنرل نے بتایا کہ ’اس کا کوئی طریقہ کار مقرر نہیں ہے۔ اس کا انحصار عدالت پر ہے۔ ہم انتظار کر رہے ہیں کہ وہ کب آگاہ کریں گے۔‘

قانونی ماہرین کے مطابق بظاہر عدالت کے پاس تین آپشنز ہیں جن میں سے کسی ایک پر عمل کرکے اپنی رائے ظاہر کر دے گی۔ ان آپشنز کے تحت سپریم کورٹ اپنی رائے سربمہر لفافے میں میں صدر کو بھجوا سکتی ہے۔

کھلی عدالت میں بھی رائے سنائی جاسکتی ہے۔ سپریم کورٹ ویب سائیٹ یا اعلامیے کے ذریعے بھی اپنی رائے جاری کر سکتی ہے۔

بعض اوقات کسی اہم کیس کا فیصلہ ویب سائٹ پر جاری کرنے سے پہلے میڈیا کو بھی جاری کر دیا جاتا ہے (فوٹو: اے ایف پی)واضح رہے کہ کسی بھی عدالتی فیصلے کے بارے میں مروجہ طریقہ کار یہ ہے کہ عدالت کسی بھی سماعت کے اختتام پر مختصر فیصلہ سنا دیتی ہے یا پھر فیصلہ کھلی عدالت میں سنانے کے لیے کیس کاز لسٹ کے ذریعے مقرر کر دیا جاتا ہے۔

جہاں بینچ کے سربراہ یا کوئی رکن مختصر تحریری فیصلہ پڑھ کر سنا دیتے ہیں۔

دوسرا طریقہ یہ ہوتا ہے کہ کسی بھی کیس کے فیصلے کے بارے میں فریقین کو آگاہ کر دیا جاتا ہے کہ فلاں تاریخ اور وقت پر سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پر اپ لوڈ کر دیا جائے گا۔

بعض اوقات کسی اہم کیس کا فیصلہ ویب سائٹ پر جاری کرنے سے پہلے میڈیا کو بھی جاری کر دیا جاتا ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More