جنوبی کوریا کے سابق صدر کو رشوت ستانی اور غبن کے الزام میں 17 سال قید

اب تک  |  Feb 19, 2020

ویب ڈیسک: (19 فروری 2020)جنوبی کوریا کے سابق صدر کو رشوت ستانی اور غبن کے الزام میں 17 سال قید کی سزا سُنا دی گئی۔

جنوبی کوریا کے سابق صدر لی میونگ باک کی طرف سے دائر اپیل مسترد ہونے کے بعد انہیں جیل بھیج دیا گیا۔ سابق صدر لی میونگ باک کو اپنے دورِ حکومت 2008 سے 2013 کے دوران رشوت خوری اور غبن کے الزام کی وجہ سے 2018 میں 15 سال کی قید اور ایک کروڑ 11 لاکھ ڈالر جرمانہ کیا گیا تھا تاہم انہوں نے فیصلے کیخلاف اپیل کی تھی اور انہیں ضمانت مل گئی تھی۔

جنوبی کوریا کے سابق صدر پر کروڑوں ڈالرز فنڈز کے ناجائز استعمال کا جرم ثابت ہوا۔ اس کے علاوہ اُن پر الزام ہے کہ انہوں نے ٹیکنالوجی کمپنی ’سام سنگ‘کے چیئرمین لی کن ہی کو صدارتی معافی دینے کیلئے رشوت بھی لی جو ٹیکس چوری کے الزام میں جیل میں ہیں۔

بدھ کو سیئول کی سینٹرل ڈسٹرکٹ کورٹ میں سماعت کے دوران جج نے حکم دیا کہ اپنے اس غلط عمل پر ملزم کی طرف سے کسی بھی قسم کی ندامت یا احساسِ ذمےداری کا مظاہرہ نہیں کیا گیا لہٰذا اسے مزید سخت سزا دی جاتی ہے۔ عدالت نے کہا کہ ملزم نے اپنی کرتوتوں کا الزام اپنے ساتھ کام کرنے والے سرکاری ملازمین اور سام سنگ کے ملازمین پر ڈالتے رہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More