وزیراعظم سے ترک صدر کا ٹیلی فونک رابطہ، اہم ایشوز پر گفتگو

بول نیوز  |  Aug 01, 2020

وزیراعظم عمران خان سے ترک صدر رجب طیب ایردوان سے ٹیلی فونک رابطہ ہوا ہے جس میں دونوں رہنماؤں کی ایک دوسرے کو عیدالاضحیٰ کو مبارکباد بھی دی  ہے۔

رابطے کے دوران عیدالاضحیٰ کے پرمسرت موقع پر دونوں ممالک اور لوگوں کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا گیا ہے جبکہ دونوں رہنماؤں کی اہم ایشوز پر بھی گفتگو بھی کی گئی۔

اس ضمن میں اعلامیہ بھی جاری کردیا گیا ہے جس کے مطابق دونوں رہنماؤں کا طب کے شعبے میں مشترکہ اقدامات کا جائزہ  لیا گیا اور بتایا کہ پاکستان ترکی کے تعلق باہمی اعتماد اور قریبی تعاون پر مبنی ہیں۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان کشمیر پر غیر متزلزل حمایت کے لیے ترکی کے کردار کو سراہتا ہے اور اس کے ساتھ ہی ساتھ پاکستان ترک صدر کے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کو بھی سراہتا ہے۔اعلامیہ میں بتایا گیا ہے کہ دونوں رہنماؤں کا باہمی مشترکہ دلچپسی کے امور پر رابطے میں رہنے پر اتفاق ہوا ہے جبکہ وزیراعظم کا کہنا ہے کہ پاکستان ترکی کے ساتھ تمام شعبوں میں دو طرفہ تعلقات بڑھانے کا عزم رکھتا ہے۔

وزیراعظم نے کوویڈ 19 سے لڑے میں ترکی کے کردار کی تعریف کی اور پاکستان سمیت مختلف ممالک کی مدد پر ترکی کو سراہا بھی ہے۔

وزیراعظم نے ترک صدر کو کوویڈ 19 کو پھیلنے سے روکنے کے لیے پاکستان کے کردار سے آگاہ کیا اور  لوگوں کی جانیں بچانے اور معیشیت کی بہتری کے لیے اقدامات سے بھی آگاہ کیا ہے۔

دوسری جانب وزیراعظم نے مسجد آیا صوفیہ کے کھلنے پر ترک صدر کو مبارکباد دی اور بتایا کہ لاکھوں پاکستانیوں نے مسجد آیا صوفیہ میں نماز کو ٹی وی پر لائیو دیکھا تھا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل بھی گزشتہ 86 سالوں سے ترکی میں بند مسجد آیا صوفیہ کی بحالی پر وزیراعظم عمران خان کی جانب سے ترک صدر رجب طیب ایردوان کو مبارکباد پیش کی گئی تھی۔

وزیراعظم عمران خان کی ترک صدر رجب طیب ایردوان اور ترک عوام کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان  نے جمعہ کی نماز کے ساتھ مسجد کو دوبارہ آباد کرنے پر اظہارمسرت کیا تھا۔

یاد رہے کہ مسجد آیا صوفیہ میں کل 86 برس بعد پہلی بار نماز جمعہ ادا کی گئی تھی۔

ترکی کی آیا صوفیہ مسجد کا یادگاری سکہ جاریواضح  رہے کہ  گزشتہ  روز  ترکی  کی آیا صوفیہ مسجد   میں نماز جمعہ کی ادائیگی کو دنیا کے متعدد نشریاتی اداروں نے براہ راست دکھایا اور لاکھوں افراد نے دنیا بھر میں مسجد میں نماز کی ادائیگی کو دیکھا۔

خیال رہے کہ  ترک عدالت نے 11 جولائی کو آیا صوفیہ کو مسجد میں تبدیل کرنے کی اجازت دی تھی جس کے بعد ترک صدر رجب طیب اردوان نے عمارت کو مسجد میں تبدیل کرنے کی منظوری دی تھی۔

آیا صوفیہ عمارت کو 1934 میں مصطفیٰ کمال اتاترک نے میوزیم میں تبدیل کردیا تھا، اس سے قبل مذکورہ عمارت سلطنت عثمانیہ کے قیام سے مسجد میں تبدیل کی گئی تھا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More