ٹک ٹاک انتظامیہ نے پابندی لگانے پر امریکا کے خلاف قانونی کارروائی کی دھمکی دے دی، جانیے تفصیلات

سچ ٹی وی  |  Aug 09, 2020

غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے مشہور چینی ایپ ٹک ٹاک پر پابندی عائد کیے جانے پر ٹک ٹاک نے بھی ڈونلڈ ٹرمپ کو دھمکی دے دی۔

ٹک ٹاک انتظامیہ نے امریکی صدر کے اقدام پر حیرانی ظاہر کرتے ہوئے امریکا کے خلاف قانونی جنگ لڑنے کا عندیہ دے دیا۔

ٹک ٹاک انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ٹرمپ کا ایگزیکٹو آرڈر امریکی حکومت کا اب تک کا سب سے بدترین عمل ہے جو نامعلوم رپورٹس اور معلومات کی بنیاد پر جاری کیا گیا ہے۔

ویڈیو شیئرنگ ایپلیکیشن کا کہنا تھا کہ ٹک ٹاک نے چینی حکومت سے کسی قسم کا ڈیٹا تبدیل نہیں کیا اور کسی قسم کا سینسر حکومت کے کہنے پر لگایا ہے۔

ٹک ٹاک کا کہنا ہے کہ ہم تمام قانونی راستے استعمال کریں گے اور یقینی بنائیں گے کہ قانون کی پاسداری قائم رہے۔

یاد رہے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ٹک ٹاک اور وی چیٹ کے خلاف دو ایگزیکٹو حکم نامے جاری کئے تھے، حکم ناموں میں کہا گیا تھا کہ کوئی امریکی کمپنی ٹک ٹاک اور وی چیٹ کے ساتھ کام نہیں کر سکتی۔

وائٹ ہاؤس کا کہنا تھا کہ ایگزیکٹو حکم نامے قومی سلامتی کے پیش نظر جاری کیے گئے ہیں، ٹک ٹاک، وی چیٹ اب امریکا میں ایپل اور گوگل ایپ پر دستیاب نہیں ہوں گے۔

حکم نامے میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ ان موبائل ایپس کے ذریعے کارپوریٹ جاسوسی ہو رہی ہے، ٹک ٹاک سے امریکیوں کی معلومات حاصل کی جا رہی ہیں۔

حکم نامے کے مطابق امریکی سرکاری ملازمین اور کنٹریکٹرز کی معلومات حاصل کی جا رہی ہیں۔ ٹرمپ کے ایگزیکٹو حکم نامے پر 45 کے اندر عمل درآمد ہوگا۔

اس سے قبل گزشتہ ماہ صدر ٹرمپ نے ٹک ٹاک پر پابندی عائد کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہم حالات سے متعلق دیکھیں گے کہ کیا ہوتا ہے، البتہ امریکا میں ٹک ٹاک کے حوالے سے بہت سارے متبادل ایپس تلاش کر رہے ہیں جس سے صارفین مستفید ہوسکتے ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More