مسلح افواج کو بدنام کرنے پر سزا کا بل قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی سے منظور

اردو نیوز  |  Apr 08, 2021

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ نے نئے مسودہ قانون کی منظوری دی ہے جس کے تحت پاکستان کی مسلح افواج یا ان کے کسی رکن کو بدنام کرنے والے فرد کو دو سال قید یا پانچ لاکھ روپے تک جرمانہ کیا جاسکے گا۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی کی طرف سے منظور کیے گئے مسودہ بل کے ذریعے تعزیرات پاکستان میں ترمیم تجویز کی گئی ہے۔ ’کریمینل لا (ترمیمی) ایکٹ بل 2020‘ پاکستان تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی امجد علی خان نے پرائیویٹ ممبر بل کے طور پر گذشتہ سال پیش کیا تھا۔

بدھ کو قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا اجلاس پارلیمنٹ ہاؤس میں راجا خرم نواز کی زیرصدارت منعقد ہوا۔ چیئرمین نے ووٹنگ کروائی تو پاکستان پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن کے ارکان نے اس بل کی مخالفت کی تاہم ووٹ برابر ہونے پر چیئرمین نے اپنا ووٹ کا حق استعمال کرتے ہوئے بل کو منظور کر کے قومی اسمبلی میں بھیج دیا۔

بل کے ذریعے تعزیرات پاکستان کے سیکشن 500 میں ایک اور شق کا اضافہ کیا گیا ہے جس میں یہ تجویز دی گئی ہے کہ جو کوئی بھی جان بوجھ کر پاکستان کی مسلح افواج یا ان کے کسی رکن کا تمسخر اڑاتا ہے، عزت کو گزند پہنچاتا ہے یا بدنام کرتا ہے وہ ایسے جرم کا قصوروار ہوگا جس کے لیے دو سال تک قید کی سزا یا پانچ لاکھ روپے تک جرمانہ یا دونوں سزائیں ہو سکتی ہیں۔

یاد رہے کہ تعزیرات پاکستان کے سیکشن 500 میں پہلے ہی ہتک عزت کے خلاف سزا کا ذکر ہے تاہم اس میں صرف اتنا لکھا گیا ہے کہ ’جو کوئی شخص کسی دوسرے کو بدنام کرے گا تو اس کو دو سال کی قید یا جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکتی ہیں۔‘

قائمہ کمیٹی کے اجلاس کے دوران امجد علی خان کا کہنا تھا کہ ’پاکستانی فوج کے ادارے کا تمسخر اڑانے والے پر سول عدالت میں کیس چلے گا۔‘

پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے کمیٹی کے ممبر آغا رفیع اللہ کا کہنا تھا کہ 'یہ قانون سیاسی انتقام کے لیے استعمال ہوگا، آپ آزادی رائے پر قدغن لگا رہے ہیں۔ اداروں پر نیک نیتی سے کی گئی تنقید بھی اس قانون کے دائرے میں آئے گی۔'

ان کا کہنا تھا ک ہ’ 22 کروڑ عوام میں سے دو فیصد لوگ بھی اداروں کے خلاف نہیں، اپنے اداروں کے ساتھ سیسہ پلائی دیوار کی طرح کھڑے ہیں۔‘

مسلم لیگ ن کی رکن مریم اورنگزیب کا کہنا تھا کہ ’اس قانون کو متعارف کروایا ہی کیوں جا رہا ہے؟ پاکستان کے شہری کیوں ملکی اداروں کوجان بوجھ کر اشتعال دلائیں گے؟ اس میں ادارے کو بھی متنازع بنایا جا رہا ہے۔‘

 اس پر امجد علی خان کا کہنا تھا کہ ’یہ قانون کسی کے خلاف نہیں لایا جا رہا ہے۔‘

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More