خاتون پولیس افسر ’کشمیر ہمارا ہے‘ کہنے پر گرفتار

سماء نیوز  |  Apr 17, 2021

مقبوضہ کشمیر میں پولیس نے جمعہ کو اپنی ہی خاتون افسر کو اپنے گھر کی تلاشی کے دوران فورسز کی کارروائی میں رکاوٹ ڈالنے پر برطرف کرنے کے ساتھ گرفتار کرلیا۔

کے مطابق مقبوضہ کشمیر پولیس نے ایک بیان میں الزام لگایا ہے کہ خاتون افسر نے بدھ کو جنوبی فریسل گاؤں میں سرکاری فورسز کے محاصرے اور تلاشی مہم میں مبینہ طور پر ’خلل ڈالنے کے ارادے سے‘ انٹرنیٹ پر لائیو اسٹریم کیا۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو میں خاتون کو چھاپہ مار فوجیوں پر چیختے ہوئے سنا جاسکتا ہے، جس میں وہ کہہ رہی ہیں کہ ’’کیوں بار بار آتے ہو یہاں، کیا ہے یہاں پر، اگر میرے گھر پر چیکنگ کرنی ہے تو جوتے باہر نکالنا پڑیں گے، اندر میں جوتے پہن کر نہیں جانے دوں گی سمجھے تم لوگ‘‘۔

قابض بھارتی فوجی کی جانب سے کہا گیا کہ چپ چا بیٹھو، جس پر خاتون کا مزید کہنا تھا کہ ’’ہم ڈرنے والوں میں سے نہیں ہیں، کشمیر ہمارا ہے ہمارا، آپ کہاں سے آتے ہو، ہم ڈرنے والوں میں سے نہیں، ہم کسی سے نہیں ڈرتے‘‘۔

مقبوضہ کشمیر پولیس کے بیان میں الزام لگایا گیا ہے کہ افسر نے ’تلاشی پارٹی سے مزاحمت کی‘، پُرتشدد ہوگئیں اور ’دہشت گردوں کے پرتشدد اقدامات کی تعریف کرنے لگیں‘۔ تاہم خاتون افسر کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی ہے۔

پولیس کے مطابق افسر کو گرفتار کرکے برطرف کردیا گیا، ان پر بھارت کے انسداد دہشت گردی کے اہم قانون کے تحت فرد جرم عائد کی گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق برطرف اہلکار ایک خصوصی پولیس افسر تھیں، اس طرح کے اہلکار نچلے درجے کے پولیس افسر ہوتے ہیں جنہیں بنیادی طور پر بغاوت کیخلاف کارروائیوں کیلئے بھرتی کیا جاتا ہے۔

کشمیری پولیس کا مزید کہنا ہے کہ وہ اس بات کی بھی تحقیقات کر رہے ہیں کہ آیا اس پولیس افسر کے عسکریت پسندوں سے رابطے تھے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More