غزہ: اسرائیل کا فضائی حملہ، 3 بچوں سمیت 9 فلسطینی شہید

ہم نیوز  |  May 11, 2021

غزہ: اسرائیلی فوج نے غزہ پر فضائی حملہ کیا ہے جس کے نتیجے میں ابتدائی رپورٹ کے تحت تین بچوں سمیت 9 فلسطینی شہید ہو گئے ہیں۔ اسرائیلی فضائیہ نے حملے میں غزہ کے شمال مغربی علاقے بیت حانون میں رہائشی علاقوں کو نشانہ بنایا ہے۔

خبر رساں اداروں کے مطابق جمعتہ الوداع سے فسلطینی عوام پر حملے جاری ہیں لیکن ابھی اس وقت ان میں مزید شدت آئی ہے کہ جب اسرائیلی فوج نے غزہ میں فضائی حملے کیے ہیں۔

خبر رساں ادارے کے مطابق اسرائیلی فورسز کے حملے میں حماس کے کمانڈر بھی شہید ہوئے ہیں۔ عرب میڈیا کے مطابق شہید کمانڈرکی شناخت محمد عبداللہ فياض کے نام سے ہوئی ہے۔

Israeli air strikes killed at least 9 people in occupied Gaza on Monday, say health officials — including 3 children.

Israeli forces earlier wounded 300+ Palestinians in Jerusalem. Hamas later launched rockets into Israel, with no reported Israeli casualties. pic.twitter.com/v9asCFmVdx

— AJ+ (@ajplus) May 10, 2021

عرب میڈیا نے فلسطینی حکام کے حوالے سے دعویٰ کیا ہے کہ متعدد گولے چلتی گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں پر گرے ہیں جس کے نتیجے میں سڑکوں پہ نعشوں کے ڈھیر لگ گئے ہیں۔

اسرائیلی حملوں کو معمول کی جھڑپیں قرار دینا گھناؤنی بات ہے، صدر پاکستان

اسرائیلی فوج کے ترجمان جوناتھن کانریکس نے بتایا ہے کہ مسجد الاقصیٰ کے کمپاؤنڈ میں اسرائیلی فورسز کی کارروائی کے بدلے میں حماس نے اسرائیل کی جانب راکٹ داغے جس کے جواب میں اسرائیل نے فضائی حملہ کیا ہے۔

مسجد اقصیٰ کے احاطے میں نہتے فلسطینیوں پر اسرائیلی فوج کی فائرنگ اور آنسو گیس شیلنگ سے مزید 300 سے زائد فلسطینی زخمی ہوگئے ہیں۔

جمعے سے جاری اسرائیلی جارحیت میں اب تک 700 سے زائد فلسطینی زخمی ہوئے ہیں۔

اس سے قبل مسجد اقصیٰ میں اسرائیلی فورسز کے وحشیانہ تشدد کے جواب میں حماس نے یروشلم پر راکٹ ‏حملے کیے تھے۔

اسرائیلی میڈیا کا کہنا تھا کہ غزہ کی پٹی سے حماس نے 7 راکٹ فائر کیے ہیں جو یروشلم کی یہودی ‏بستیوں میں گرے ہیں لیکن ایک کو فضا ہی میں گرا دیا گیا تھا۔

مسجد اقصیٰ میں اسرائیلی پولیس کا دھاوا، 170 فلسطینی زخمی

حماس نے راکٹ حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا تھا کہ اسرائیلی مظالم کا بھرپور ‏جواب دیا جائے گا

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More