’کورونا کی نئی اقسام سے شرح اموات 35 فیصد تک پہنچ سکتی ہے‘

اردو نیوز  |  Aug 01, 2021

برطانوی حکومت کے اہم سائنس دانوں نے خبردار کیا ہے کہ ’مستقبل میں سامنے آنے والی کورونا وائرس کی نئی اقسام سے شرح اموات 35 فیصد تک پہنچ سکتی ہے‘

برطانوی ادارے سائنٹیفک ایڈوائزری گروپ فار ایمرجنسیز (ایس اے جی ای) کے مطابق ’حقیقت پسندانہ امکان‘ ہے کہ مستقبل میں سامنے آنے والی کورونا وائرس کی اقسام ایم ای آر ایس جتنی مہلک ہو سکتی ہیں جس کی شرح اموات 35 فیصد ہے۔

رپورٹ کے مطابق وائرس کے پھیلاؤ سے اس کے نئی مہلک شکل اختیار کرنے کا امکان بڑھ رہا ہے۔ دنیا بھر میں تیزی سے ویکسینیشن کی فراہمی قوت مدافعت کو بڑھائے گی جو وائرس کی مختلف اقسام میں شکل بدلنے کی رفتار تیز اور مہلک ہو سکتی ہے۔

ایڈوائزری باڈی نے تنبیہہ کی ہے کہ مستقبل میں سامنے آنے والی نئی شکلیں اگر بیٹا قسم سے پیدا ہونے کے بعد الفا اور ڈیلٹا اقسام سے مل گئیں تو وہ ویکسین کے مقابل مزاحمت پیدا کرسکتی ہیں۔

رپورٹ میں جہاں ویکسین کے بعد کورونا کے مریضوں میں وبا کے سنگین اثرات میں کمی کی توقع کی گئی ہے وہیں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ ’ویکسین مکمل جراثیم کش قوت مدافعت مہیا نہیں کر رہی‘ اس لیے نئی مہلک اقسام کے نتیجے میں شرح اموات بڑھ سکتی ہے۔

ویکسین کا مکمل مدافعت پیدا نہ کر سکنا وائرس کی مہلک شکلوں کا باعث قرار دیا گیا ہے (فوٹو: اے ایف پی)

ایس اے جی اے نے یہ تنبیہہ بھی کی ہے کہ کورونا وائرس مختلف جانوروں بشمول نیولے نما منکس کو بھی متاثر کر سکتا ہے۔ مختلف ملکوں کی جانب سے اب تک لاکھوں منکس کو وائرس پھیلانے کا ذریعہ بننے کی وجہ سے تلف کیا جا چکا ہے۔

جانوروں (کتوں، بلیوں، چوہوں وغیرہ) کے وائرس سے متاثر ہونے اور انہیں پھیلانے کا ذریعہ بننے کے ممکنہ خطرے کے پیش نظر گروپ نے تجویز کیا ہے کہ حکومتوں کی سطح پر ان جانوروں کو بڑی تعداد میں تلف کرنے یا ویکسینیشن کا پروگرام ترتیب دینا چاہیے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More