نیو دہلی، خوفناک آتشزدگی، 26 افراد ہلاک، ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ

بول نیوز  |  May 13, 2022

مغربی دہلی میں منڈکا میٹرو اسٹیشن کے قریب ایک تجارتی عمارت میں خوفناک آگ لگنے سے کم از کم 26 افراد ہلاک اور 30 افراد زخمی ہو گئے۔بھارتی میڈیا کے مطابق چار منزلہ عمارت میں لگنے والی خوفناک آگ لگنے سے متعدد افراد ہلاک ہو گئے ہیں، اب تک 26 لاشیں نکالی جا چکی ہیں پولیس کو خدشہ ہے کہ یہ تعداد بڑھ سکتی ہے۔ حکام نے بتایا کہ ایک منزل کی تلاش ابھی باقی ہے۔

تقریباً 30 فائر ٹینڈرز اب بھی جائے وقوعہ پر موجود ہیں اور ایمبولینسیں امدادی کاموں کے لیے تعینات ہیں۔

آگ سے جھلسنے والے 40 سے زائد افراد کو اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ پولیس نے بتایا کہ عمارت سے تقریباً 60-70 لوگوں کو بچا لیا گیا ہے۔

بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ تجارتی عمارت جس میں بنیادی طور پر دفتر کی جگہ تھی – مغربی دہلی میں منڈکا میٹرو اسٹیشن کے قریب واقع ہے۔

فائر ڈپارٹمنٹ کے حکام کے مطابق آگ لگنے کی اطلاع شام 4.40 بجے ملی، جس کے بعد 20 فائر ٹینڈرز موقع پر پہنچ گئے۔

ڈپٹی کمشنر آف پولیس (آؤٹر) سمیر شرما نے کہا کہ آگ عمارت کی پہلی منزل سے شروع ہوئی، جس میں سی سی ٹی وی کیمرہ اور راؤٹر بنانے والی کمپنی کا دفتر ہے۔

مزید پڑھیں3 hours agoبھارت میں سوگ؛ اسٹاک مارکیٹ کریش ہونے سے اربوں روپے ڈوب گئے

بھارت میں اسٹاک مارکیٹ کریش ہونے سے سرمایہ کاروں کے اربوں روپے...

4 hours agoبلیک کوبرا کو پانی پلانے کی وڈیو وائرل

بھارت میں بلیک کوبرا کو گلاس کے ذریعے پانی پلانے کی وڈیو...

6 hours agoکرناٹک میں تبدیلی مذہب کے خلاف قانون کو جلد نافذ کرنے کے لیے آرڈیننس لانے کی تیاری

بھارتی ریاست کرناٹک میں تبدیلی مذہب کے خلاف قانون کو جلد نافذ...

7 hours agoمتحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زائد النہیان انتقال کرگئے

یو اے ای کے صدر اور ابوظہبیٰ کے حکمران شیخ خلیفہ بن...

12 hours agoاب عمرہ زائرین مکہ اور مدینہ کے علاوہ دیگر شہر بھی جاسکیں گے

عمرہ زائرین کو مکہ اور مدینہ کے علاوہ دیگر شہروں میں بھی...

12 hours agoجوبائیڈن کی چین کے خلاف متحدہ محاذ بنانے کی تیاری

امریکی صدر جوبائیڈن نے چین کے خلاف متحدہ محاذ بنانے کی تیاری...

تازہ ترین نیوز پڑہنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کریں بول نیوزایپ

General Rectangle – 300×250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More