News Search
Home News Dictionary TV Channels Names Weather Live Cricket Videos Photos Results Naats
Home Taza Tareen
افغان فورسز کی چمن میں بلااشتعال فائرنگ، 1 شہری شہید، 18 افراد زخمی     چمن بارڈر پر افغان فورسز کی فائرنگ، 4 ایف سی جوان زخمی، آئی ایس پی آر     راجن پور: تھانہ محمد پور کی حدود میں فائرنگ،4افراد جاں بحق 1زخمی     وزیراعظم کا ویژن پاکستان کو لوڈ شیڈنگ فری بنانا ہے، عابد شیرعلی     آخری دن میزبان بولنگ کا ہمارے پاس جواب نہ تھا، مصباح الحق     بارباڈوس:ویسٹ انڈیزکےہاتھوں پاکستان کوعبرتناک شکست     سرحد پار سے مردم شماری ٹیم پر فائرنگ، چمن سرحد بند     ’مکی‘ اور ’منی‘ حقیقی زندگی میں میاں بیوی تھے     پاناما کیس، سپریم کورٹ کا آج ہی جے آئی ٹی تشکیل دینے کا فیصلہ     پنجاب: مختلف اضلاع میں سرچ آپریشن، 41 افراد گرفتار     
Urdu News
Maulana Tariq Jamil
a
Naat Khawan
Amjad Sabri Farhan Ali Qadri
Fasih Uddin Soharwardi Ghulam Mustafa Qadri
Imran sheikh Attari Junaid Jamshed
Owais Raza Qadri Shahbaz Qamar Faridi
Syed Mohammad Furqan Qadri Ummeh Habiba
Waheed Zafar Qasmi Zulfiqar Ali
UrduWire Names Directory
Muslim Names Arabic Names
Muslim Boy Names Muslim Girl Names
Pictures Gallery
Cleaning The Kaaba Area - One Of The Best Jobs In The World Cleaning The Kaaba Area - One Of The Best Jobs In The World
Kallar Kahar beautiful Motorway road view, Pakistan Kallar Kahar beautiful Motorway road view, Pakistan
Samzu Water Park Pictures Ticket Price 2015 & Location in Karachi Samzu Water Park Pictures Ticket Price 2015 & Location in Karachi
View all Pictures

 

Home >> Urdu News >> BBC Urdu
پاکستان کی خبریں Share your views
65 سال بعد ملے مگر بات نہیں ہو پائی [بی بی سی اردو] 04 May, 2017
جان سلطانہ

جان سلطانہ چھ سے سات سال کی عمر میں لاپتہ ہو گئی تھیں

پاک بھارت تعلقات کتنے ہی کشیدہ کیوں نہ ہوں، سوشل میڈیا کی سرحدیں نہیں ہوتیں۔

سوشل میڈیاہی نے بچھڑے بہن بھائیوں کو ملنے میں مدد کی، پھر اسی کے ذریعے بات ہوئی اور اب ہینسٹھ سال بعد ایک بہن اپنے بھائیوں سے ملنے اپنے آبائی علاقے پہنچ گئی ہے۔

خیبر پختونخوا کے دور افتادہ علاقے اپر دیر سے گمشدہ ہونے والی خاتون 65 سال بعد جمعرات کو بھارت کے زیر انتظام کشمیر سے اپنے علاقے پہنچی ہیں۔

جان سلطانہ نامی اس خاتون کا رابطہ پاکستان میں اپنے خاندان کے ساتھ سوشل میڈیا کے ذریعے ہوا تھا۔

پاکستان پہنچنے سے پہلے جب بہن کی سوشل میڈیا پر اپنے بھائیوں سے ویڈیو کے ذریعے بات ہوئی تو انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں بیٹھی بہن فرط جذبات سے بے ہوش ہو گئی تھیں۔

جان سلطانہ چھ سے سات سال کی عمر میں لاپتہ ہو گئی تھیں اور وہ گھر میں سب سے بڑی بیٹی تھیں۔ اُن کے بھائیوں کی عمریں اس وقت دو سے چار سال تک تھیں، اور آج وہی بھائی بزرگ ہیں۔

ہینسٹھ سال بعد ایک بہن بھائیوں سے ملی

ہینسٹھ سال بعد ایک بہن بھائیوں سے ملی

خاتون کے بھائی انعام الدین نے بدھ کو ان کا واہگہ بارڈر پر استقبال کیا جہاں بہن بھائی گلے ملے اور خوب روئے۔

انعام الدین نے بتایا کہ وہ بہت چھوٹے تھے جب ان کی بہن لاپتہ ہو گئی تھیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ان کی بہن کے تین بیٹے اور تین بیٹیاں ہیں اور بہت سے پوتے پوتیاں اور نواسے نواسیاں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ بہن کی گمشدگی کے تیس سال بعد تک وہ انہیں تلاش کرتے رہے لیکن اُن کا کچھ پتہ نہیں چلا۔ پھر وہ تھک ہار کر بیٹھ گئے تھے۔

انعام الدین نے بتایا کہ انہیں نہیں پتہ کہ وہ کیسے لاپتہ ہو گئی تھیں، بس انہیں یہ معلوم ہوا تھا کہ وہ کہیں کھو گئی ہیں۔ وہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر پہنچیں یہ بھی کسی کو معلوم نہیں ہے۔

یہ خاندان خیبر پختونخوا کے علاقے اپر دیر کے دور افتادہ پہاڑوں میں گھرے ایک گاؤں گورکوہی عشیری درہ میں رہائش پذیر ہے۔

ایسی اطلاعات ہیں کہ جاں سلطانہ کے بیٹوں نے اپر دیر کے نام سے فیس بک کے ایک پیج پر یہ پیغام دیا تھا کہ اُن کی والدہ کا تعلق اپر دیر کے گورکوہی عشیرہ درہ گاؤں سے ہے اور اُن کے بہن بھائی اب بھی اس گاؤں میں رہتے ہیں، اگر کوئی ان سے رابطہ قائم کرا سکے تو بہتر ہوگا۔

جان سلطانہ

پینسٹھ سال بعد اپنے بھائیوں کو دیکھ کر جان سلطانہ مسلسل رو رہی تھیں

اس صورتحال کا علم دیر سے تعلق رکھنے والے ادویات کے ایک تاجر اکرام اللہ کو ہوا تو انہوں نے اپنے دوستوں کے ذریعے اس خاندان کو تلاش کیا اور پھر ان کا رابطہ ویڈیو چیٹ کے ذریعے کرایا گیا۔

اکرام اللہ نے بی بی سی کو بتایا کہ پہلی مرتبہ اس سال سات جنوری کو فیس بک پر رابطہ ہوا تھا اور اس کے بعد یہ سلسلہ جاری رہا اور اب جاں سلطانہ یہاں پہنچی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا کے ذریعے رابطہ ہوا اور اس خاندان کے افراد کو تلاش کیا گیا اور اس طرح بہن بھائی کی ملاقات ہو سکی۔

اکرام اللہ نے بتایا کہ جب خاتون پاکستان پہنچیں اور بھائیوں سے ملی تو وہ کافی رقت آمیز مناظر تھے اور بہن، بھائیوں کو دیکھ کر مسلسل رو رہی تھیں۔

انہوں نے بتایا کہ علاقے میں لوگ خوش ہیں اور انہوں نے خاتون کا پرتپاک استقبال کیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جاں سلطانہ کو پشتو بہت کم آتی ہے اور اردو وہ بول نہیں سکتیں۔ وہ صرف کشمیری زبان بولتی ہیں اس لیے ان سے کوئی بات نہیں ہو سکی۔

جاں سلطانہ کے تین بیٹوں میں ایک سکول کے پرنسپل ہیں جبکہ دوسرے ایک نجی سکول میں پڑھاتے ہیں اور تیسرے بیٹے اپنا کاروبار کرتے ہیں۔ یہ خاتون اپنے بچوں کے ساتھ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں اننتناگ کے مقام پر رہائش پزیر ہیں۔ خاتون کے شوہر 30 سال پہلے وفات پا گئے تھے۔


View News As Image
Post Your Comments
Select Language:    
Type your Comments / Review in the space below.

Name: Email:(Will not be shown) City:
Enter The Code:

 
Home | About Us | Contact Us |  Profiles |  Privacy Policy & Disclaimer | What is Meta News?
Top Searches: Jang News Cricinfo Express Tribune,  , SSC Part 1 Results 2016   Dunya News Bol News Live Samaa News Live Metro 1 News Waqt News Hum TV PTV Sports Live KTN News
Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on "as it is" based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Please read more!

UrduWire.com - First ever Urdu Meta News portal