سعودی حکومت نے تاریخ میں پہلی بار اقامہ ہولڈرز کو نئی سہولت سے نواز دیا، اہم تفصیلات جانئے

سچ ٹی وی  |  Jul 14, 2020

سعودی ذرائع ابلاغ کے مطابق محکمہ پاسپورٹ نے ٹوئٹر پر بیان میں کہا کہ ان تمام غیرملکیوں کے اقاموں میں توسیع نیشنل انفارمیشن سینٹرکے ساتھ یکجتہی پیدا کر کے خودکار نظام کے تحت جلد کردی جائے گی ۔

بیان میں کہا گیا ہے یہ توسیع ان اقامہ ہولڈرز کو دی جائے گی جنہیں شاہی فرمان کے ذریعے جرمانوں اور فیس سے استثنی دے دیا گیا ہے جبکہ وزارت افرادی قوت و سماجی بہبود نے ان کے ورک پرمٹس میں توسیع کردی ہے۔

محکمہ پاسپورٹ کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل سلیمان الیحیی نے اس سے قبل اپنے بیان میں بتایا تھا کہ سعودی حکومت نے متعدد زمروں میں آنے والےغیرملکیوں کو ویزے اور اقامہ ختم ہو جانے پرلگنے والے جرمانوں اور فیسوں سے استثنی دے دیا ہے۔

اس سے قبل سعودی محکمہ پاسپورٹ کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل سلیمان الیحیی نے جرمانے اور فیس سے مستثنی غیرملکیوں کے زمروں کی تفصیلات جاری کی تھیں۔

واضح رہے کہ سعودی حکومت نے کورونا وبا کے دوران سفری پابندیوں کے باعث اقامے اور ویزے کی مدت ختم ہوجانے کی مشکلات سے دوچار غیرملکیوں کو جرمانے اور فیس سے استثنیٰ دینے اعلان کیا تھا۔

الاخباریہ چینل اور سبق کے مطابق میجر جنرل سلیمان الیحیی نے بتایا کہ جو لوگ خروج و عودۃ (ایگزٹ ری انٹری) ہولڈر ہیں، ان کا اقامہ موثر ہے اور وہ بین الاقوامی پروازوں پر پابندی کی وجہ سے سعودی عرب واپس نہیں آ سکے، ان پر کوئی جرمانہ ہوگا اور نہ ہی ان سے کوئی فیس وصول کی جائے گی۔

اسی طرح وہ غیرملکی جن کا اقامہ ختم ہوگیا ہو، یا سعودی عرب سے باہر رہتے ہوئے ان کے ویزے کی میعاد نکل گئی ہو، وہ بھی جرمانوں اور فیس سے مستثنی ہوں گے۔

سعودی عرب میں مقیم وہ غیرملکی جو فائنل ایگزٹ (خروج نہائی) جاری کر چکے ہوں یا ان کے پاس خروج و عودہ (ایگزٹ ری انٹری ) ہو اور سفر نہ کرسکے ہوں، وہ بھی جرمانوں اور فیس سے مستثنی ہوں گے۔

وہ لوگ جو سعودی عرب وزٹ ویزے پر آئے ہوں اور سفری پابندیوں کی وجہ سے واپس نہ جا سکے ہوں وہ بھی جرمانوں اور فیس سے مستثنی ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More