چوہدری برادران کیس: لاہورہائیکورٹ میں ڈی جی نیب کی سرزنش

سماء نیوز  |  Dec 03, 2020

گجرات کے چوہدری برادران کے خلاف کیس کھولنے پر لاہور ہائیکورٹ میں نیب کے ڈائریکٹر جنرل کی سرزنش ہوئی ہے۔ عدالت نے ایک موقع پر جج نے انہیں خبردار کیا کہ آپ کو باہر نکال دیں گے۔

چوہدری برادران کے خلاف نیب کا پرانا کیس موجودہ چیئرمین جاوید اقبال نے بند کردیا ہے۔ اس مقدمے کی سماعت لاہور ہائیکورٹ میں ہوئی۔ عدالت نے ڈائریکٹر جنرل سلیم شہزاد سے پوچھا کہ چوہدری پرویزالہی اور چوہدری شجاعت حسین کے خلاف بیس سال پرانی انکوائری کیوں کھولی۔

ڈی جی نیب عدالت کو تسلی بخش جواب نہ دے سکے مگر اس دوران تفتیشی افسر بار بار ڈی جی نیب کو لقمے دیتے رہے۔ جس پر فاضل جج نے تنبیہہ کی اب درمیان میں بولنے کی کوشش کی تو آپ کے ساتھ ڈی جی نیب کو بھی کمرہ عدالت سے باہر نکال دیں گے۔ ایسا لگتا ہے جیسے رپورٹ ڈی جی نے خود تیار ہی نہیں کی۔

ڈی جی نیب نے عدالت کے استفسار پر بتایا کہ 2015 ء سے یہ انکوائری اسسٹنٹ ڈائریکٹر نجم عباس کے پاس تھی اور انھوں نے بورڈ کو انکوائری بند کرنے کی تجویزدی تھی۔

چوہدری برادران کے وکیل نے میڈیا کو بتایا کہ نیب ہیڈ کوارٹر کا ریکارڈ جب پیش کیا گیا تو یہ بات سامنے آئی کہ کسی ایڈیشنل ڈائریکٹر نے آئی او اور ریجنل بورڈ میٹنگ کی تجاویز سے اختلاف کرکے فائل واپس بھیجی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے آگے کا ریکارڈ دستیاب نہیں تھا۔ اس ریکارڈ کی طلبی کے لیے عدالت نے وقت دیا ہے۔

فاضل جج کے سوالوں کے تسلی بخش جواب نہ دینے پر عدالت نے ڈی جی نیب کو سترہ دسمبر کو تمام اور یجنل ریکارڈ کے ساتھ دوبارہ طلب کرلیا ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More