ناسا کا اورائن خلائی جہاز چاند سے پار مدار کی جانب گامزن

بی بی سی اردو  |  Nov 25, 2022

NASA

امریکی خلائی ایجنسی ناسا کے خلائی مشن آرٹیمس ون کا اورائن خلائی جہاز اپنے مشن کے آٹھویں روز چاند سے بہت دور اپنے سفر جاری رکھے ہوئے ہے جہاں سے وہ دور دراز مدار میں داخل ہونے کی تیاری کر رہا ہے۔

ناسا کے ایک بیان میں کہا گیا کہ آرٹیمس ون اپنےمشن کے آٹھویں روز چاند کے دور دراز ریٹروگریڈ مدار میں جانے کی تیاری کر رہا ہے۔ اس مدار میں یہ چاند کے گرد مگر اس کی مخالف سمت میں سفر کرے گا۔

ناسا کا خلائی جہاز تین روز پہلے چاند کے قریب پہنچ گیا تھا جہاں یہ چاند سے 80 میل تک کے فاصلے تک پہنچا۔ اس کے بعد اس نے ایک بڑے مدار کی جانب سفر شروع کیا تھا۔

اس خلائی جہاز میں کوئی انسان موجود نہیں ہے۔ اگر سب کچھ ٹھیک رہا تو مستقبل میں عام لوگوں کے چاند کا سفر ممکن ہو سکے گا۔

ناسا نے 50 سال کے وقفے سے آرٹیمس ون مشن کے تحت اورائن راکٹ کو چاند کے اردگرد سفر پر روانہ کیا ہے تاکہ انسان کے دوبارہ چاند کی سطح پر اترنے کے مشن کے علاوہ اس سے بھی آگے تحقیقات کی جا سکے۔

Getty Imagesناسا نے 50 سال کے وقفے سے آرٹیمس اول نامی راکٹ کو چاند کے اردگرد سفر پر روانہ کیا ہے

یہ ایک آزمائشی پرواز ہے اور اس پر کوئی خلاباز سوار نہیں۔ اس پر صرف انسانی پتلےسفر کر رہے ہیں جو  ہزاروں سینسرز سے ڈھکے ہوئے ہیں۔ 

ناسا کی خلاباز زینا کارڈمین نے وضاحت کی کہ ان سینسرز سے اندازہ ہو رہا ہے کہ وہاں کا ماحول کیسا ہے اور وہ انسانوں کے لیے کیسا ہو گا۔ تابکاری سینسرز، موشن سینسرز، ایکسلرومیٹر ایسی چیزیں ہیں جن کے بارے میں ہم انسانی پے لوڈ کے بارے میں بہت خیال رکھتے ہیں۔

اور یہ اس لیے اہم ہے کیونکہ اگر یہ مشن خوش اسلوبی سے آگے بڑھتا ہے تو اگلی بار خلا باز بھی اس میں شامل ہوں گے جو پہلے چاند کے گرد مدار میں جائیں گے اور پھر آرٹیمس تھری میں پہلی خاتون اور پہلے غیر سفید فام شخص کو چاند کی سطح پر اتارا جائے گا۔

Getty Images

ناسا نے اس مرتبہ اس مشن کے پروگرام کا نام ’آرٹیمِس‘ کے نام پر رکھا ہے جو چاند کی یونانی دیوی ہے اور سورج دیوتا اپالو کی جڑواں بہن ہے۔

ناسا کے ایکسپلوریشن سسٹمز ڈیولپمنٹ کے ایسوسی ایٹ ایڈمنسٹریٹر جم فری کا کہنا ہے کہ ’ہم پہلی انسانی گاڑی کو اس سے آگے لے جا رہے ہیںاور ہم اورائن کیپسول کے ساتھ چاند سے 40,000 میل کا فاصلہ طے کرنے جا رہے ہیں۔‘

جب اورائن یہ کام مکمل کر لے گا  تو یہ زمین سے تقریباً 280,000 میل کے فاصلے پر ہوگا جو اس سے قبل 1970 میں اپالو 13 کے عملے کے ریکارڈ کو توڑے گا۔

1960 کی دہائی میں اپالو بنیادی طور پر امریکہ اور سوویت یونین کے درمیان سرد جنگ کی طاقت کی دوڑ کا حصہ تھا۔ آرٹیمس ایک بین الاقوامی کوشش ہے جس کی قیادت ناسا کر رہی ہے جس میں کینیڈین سپیس ایجنسی، جاپان ایرو سپیس ایکسپلوریشن ایجنسی اور یورپیئن سپیس ایجنسی شامل ہیں۔

’ناسا کے سائنس کے ایسوسی ایٹ ایڈمنسٹریٹر تھامس زرباچن کہتے ہیں ’یہ مختلف اقوام کے جھنڈوں اور ان کی شراکت کے بارے میں نہیں ہے۔ یہ چاند پر ایک پائیدار موجودگی کی تعمیر اور چاند کی بنیاد اور مریخ پر مستقبل کے مشن کی بنیادیں رکھنے کے بارے میں ہے۔‘

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More