روزویلٹ ہوٹل کی نجکاری،ہائیکورٹ نےحکومت سےجواب مانگ لیا

سماء نیوز  |  Jul 07, 2020

ڈپٹی اٹارنی جنرل راجہ خالد محمود نے اسلام آباد ہائیکورٹ کو بتایا ہے کہ پی آئی اے کی ملکیتی ہوٹل روزویلٹ کی نجکاری نہیں ہورہی۔عدالت نے انھیں ہدایت دی ہے کہ حکومت سے پوچھ کربتائیں کہ روزویلٹ ہوٹل کی نجکاری روک دی گئی یا نہیں۔

اسلام آباد ہائیکورٹ میں منگل کو امریکہ میں پی آئی اے کے ملکیتی روز ویلٹ ہوٹل کی نجکاری روکنے کی درخواست پر سماعت ہوئی۔اسلام آباد ہائی کورٹ کےجسٹس عامرفاروق نے  کیس کی سماعت کی۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ پی آئی اے کی ملکیتی ہوٹل روزویلٹ کی نجکاری نہیں ہورہی۔ اس پرجسٹس عامر فاروق نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سے استفسار کیا کہ اس سلسلے میں آپ تحریری بیان دینا چاہیں گے؟۔ جسٹس عامر فاروق کو ڈپٹی اٹارنی جنرل نے بتایا کہ حکومت سے پوچھ کر ہی عدالت کو آگاہ کرونگا۔

عدالت نےڈپٹی اٹارنی جنرل راجہ خالد محمود کوحکومت سے ہدایات لے کر عدالت کو آگاہ کرنے کی ہدایت کی۔ راجہ خالد محمود کو کہا گیا کہ کیا روزویلٹ ہوٹل کی نجکاری روک دی گئی یا نہیں، حکومت سے پوچھ کر بتائیں۔ عدالت نے کیس کی سماعت 15جولائی تک ملتوی کردی ہے۔

واضح رہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ میں وکیل شریف صابر نے میاں غفار ایڈووکیٹ کے ذریعے درخواست دائر کی۔ درخواست گزار کا کہنا تھا کہ ہر دورِ حکومت میں روزویلٹ ہوٹل کوبیچنےیا نجکاری کی کوشش کی گئی،زولفی بخاری روزویلٹ کوفرنٹ مین کے ذریعے سستے داموں خریدنا چاہتے ہیں،زولفی بخاری وزیراعظم سےقربت کی وجہ سے خاص گروپ کے ذریعے فائدہ لینے کی کوشش میں ہیں۔

درخواست میں استدعا کی گئی کہ عدالت حکومت کو روزویلٹ ہوٹل کو بیچنے یا نجکاری سے روکنے کا حکم جاری کرے۔

درخواست میں وزیراعظم کے معاون خصوصی زولفی بخاری، وزیر ہوابازی غلام سرورخان کوفریق بنایا گیا ہے۔مشیرخزانہ حفیظ شیخ،سیکرٹری ایوی ایشن بھی درخواست میں فریق ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More