ہراسانی سےمتعلق 15 برس تک کسی کو نہیں بتایا،عائشہ عمر

سماء نیوز  |  Aug 05, 2020

اداکارہ عائشہ عمر نے ایک بار پھر جنسی ہراسانی سے متعلق بات کرتے ہوئے انکشاف کیا ہے کہ انہیں انڈسٹری میں عمر سے دگنا بااثر شخص ہراساں کرتا رہا اور وہ 15 برس تک خاموش رہیں۔

رواں برس جنوری میں عائشہ عمر نے ایک انٹرویو کے دوران بتایا تھا کہ انہیں ہراسگی کا سامنا کرنا پڑا ہے تاہم اس وقت ان کا کہنا تھا کہ اس تلخ تجربے کے حوالے سے ابھی بات کرنے کی ہمت نہیں تاہم بہت جلد اس حوالے سے تمام حقائق سامنے لاؤں گی۔

گزشتہ دنوں پاکستانی اداکارہ عائشہ عمر نے ہالی ووڈ اداکارہ اور ڈائریکٹر روز میکگوان سے انسٹاگرام لائیو سیشن کے دوران مختلف موضوعات کے ساتھ شوبز انڈسٹری میں جنسی ہراسانی سے متعلق موضوع پر بھی گفتگو کی۔

. In 2017, Rose McGowan decided to break the silence about Hollywood and one of the most powerful men in it, Harvey Weinstein. She decided to tell her story to the world. Did the world believe her? Not really. As is the case with most silence breakers. “Time” magazine, though recognised her as one of the Silence Breakers and their Person of the year, for speaking out about sexual harassment/assault. Soon after, several other actresses started sharing their stories of assault by the same monster. Her book “Brave” tells her story in her own voice. A singular voice that stands in a large arena full of women with similar stories of assault and rape. . In my eyes, Rose is one of the bravest women in the world today. I have watched several of her interviews and the way she articulates her feelings, emotions and thoughts is mesmerising. She hits the nail on the spot. Every single time. Rose is also an angry woman. A woman who allows herself to feel and feels no need to justify her emotions to anyone. Her fight is to allow all women in society to feel angry for what they have been through. For what they have been made to go through. Two years ago, I finally allowed myself to acknowledge and talk about my own sexual harassment story by a powerful monster, twice my age. When Rose agreed to go live with me, I felt I was dreaming. It was unreal. I thought non-stop about everything that I wanted to ask her, everything that I wanted to tell her about Pakistan. But she’s been asked everything and she’s answered everything…. that’s why I decided to chat with Rose about how she is doing right now, at this moment in her life, let the conversation flow freely…. and it did… it was real and honest, probably uncomfortable for some…. I did think of some solid questions to ask but never got around to them… they are all still floating in my head. We plan to go live again in a week, and this time go deeper into the various layers and constructs of societies all over the world. Would love for you all to join. Until next time folks! 🌹🧚‍♀️✨❤️ . . #ayeshaomar #rosemcgowan #metoo #feminism #feminist #womensupportingwomen #timesup #speakup #crazy #keepitreal #hereandnow

A post shared by Ayesha Omar (@ayesha.m.omar) on Jul 31, 2020 at 12:06am PDT

اداکارہ کا کہنا تھا کہ جب میں نے انڈسٹری میں قدم رکھا تو اس وقت میری عمر 23 سال تھی اور اس وقت میری عمر سے دُگنے بااثر آدمی نے مجھے جنسی ہراسانی کا نشانہ بنایا اور یہ سلسلہ برسوں تک چلتا رہا۔

انہوں نے بتایا کہ یہ محض ایک بار نہیں ہوا، اس کا سلسلہ کئی عرصے چلتا رہا لیکن میں اس پر کوئی کارروائی نہیں چاہتی تھی۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت جو میرے ساتھ ہورہا تھا میں نے اسے جیسے ایک ڈبے میں بند کردیا اور کہا ٹھیک ہے یہ میری زندگی میں ہورہا ہے اور مجھے اس سے نمٹنا ہے۔

عائشہ عمر نے کہا کہ 15 برس تک میں نے یہ بات کسی کو نہیں بتائی کیونکہ میں یہ بات کسی سے شیئر نہیں کرنا چاہتی تھی، میں نے اسے وہیں رہنے دیا، کسی کو نہیں بتایا اور آخر کار میں نے 2 برس پہلے یعنی 2018 میں کسی سے اس بارے میں بات کی۔

اداکارہ کا مزید کہنا تھا کہ انہوں نے مجھ سے پوچھا کیا انڈسٹری میں جنسی ہراسانی ہوتی ہے اور یہ پہلی بار تھا کہ میں نے کہا تھا کہ ہاں ایسا ہوتا ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More