لیاری گینگ وار کے سرغنہ عزیر بلوچ پر فرد جرم عائد، مزید اہم تفصیلات جانئے

سچ ٹی وی  |  Jul 07, 2020

جے آئی ٹی کے مطابق ملزم 98 افراد کےقتل میں واسطہ اور بالواسطہ ملوث رہا ہے۔ ملزم کو56مقدمات کا سامنا ہے۔ملزم کے غیرملکی بینکوں میں لاکھوں درہم کے اثاثے موجود ہیں۔

جے آئی ٹی میں سابق صدر آصف علی زرداری ،اُن کی بہن فریال تالپورسمیت پیپلزپارٹی کے کسی بھی موجودہ رکن اسمبلی کا نام موجود نہیں ہے، لیاری گینگ وار کےعزیربلوچ کی 35 صفحات پر مشتمل جےآئی ٹی رپورٹ سامنےآگئی۔

جوائنٹ انویسٹی گیشن رپورٹ کے مطابق عزیر بلوچ نے198 افراد کے قتل کا اعتراف کیا۔ ان افراد کے قتل میں واسطہ اور بالواسطہ ملوث رہا۔

عزیر بلوچ نے اعتراف کیاکہ اپنے باپ کے قتل کا بدلہ لینے کے لیے مارچ 2013میں ارشد پپو کو قتل کرایا۔

عزیر بلوچ نے کراچی کی شیر شاہ کباڑی مارکیٹ میں مخالف سیاسی جماعت کو بھتہ دینے کے شبے پر قتل کا اعتراف کیا۔

عزیر بلوچ کے کہنے پر جبار لنگڑا کے ذریعے شیرشاہ کباڑی مارکیٹ میں11افراد کو قتل کرایا۔ جے آئی ٹی کے مطابق عزیر بلوچ نے 2012میں لیاری آپریشن کے دوران اپنے کارندوں کو پولیس کے خلا ف مزاحمت کا حکم دیا

مزید پڑھیں: عزیر بلوچ، سانحہ بلدیہ اور نثار مورائی کی جے آئی ٹیز پبلک، سنسنی خیز انکشافات

جے آئی ٹی میں عزیربلوچ، گینگ گروپ اور ایم کیوایم کے درمیان رابطوں کا بھی انکشاف ہواہے۔ عزیربلوچ نے پیپلزپارٹی کونسلرز اور تھانوں پر حملوں کا بھی اعتراف کیا۔

عزیر بلوچ کے دبئی کے بینکوں میں ساڑھے 10لاکھ درہم موجود تھے۔ ملزم کے لاکھوں درہم کی مالیت کی گاڑی اوردوست، بھائی اور سالے کے نام پر مسقط میں گھر ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

ملزم کی بیوی کے نام پر گودام اور بھینوں کا تبیلہ ہونے کا انکشاف بھی ہواہے۔ ملزم کے پاکستان میں کروڑ روں روپے مالیت کے گھر اور پلاٹس ہونے کا بھی انکشاف ہواہے۔

عزیر بلوچ لیاری میں جس گھر میں مقیم تھا۔اُس کی مالیت بھی کروڑوں میں ہے۔ جے آئی ٹی میں سابق صدر آصف علی زرداری، اُن کی بہن فریال تالپورسمیت پیپلزپارٹی کے کسی بھی موجودہ رکن اسمبلی کا نام موجود نہیں ہے۔

 

 

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More