ٹوئٹر کا نیا قانون، رضامندی کے بغیر کسی کی تصویر شیئر کرنے پر پابندی

بول نیوز  |  Dec 01, 2021

ٹوئٹر نے صارفین پر رضامندی کے بغیر کسی کی تصویر یا وڈیو شیئر کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔

دنیا کی معروف مائیکرو بلاگنگ اور سوشل نیٹ ورکنگ سروس ٹوئٹر نے گزشتہ روز صارفین کے لیے اپنے نئے ضابطوں کا اعلان کیا جن کے تحت عوامی شخصیات کو چھوڑ کر صارفین کو کسی کی تصویریا وڈیو اس کی رضامندی کے بغیر شیئر کرنے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

ٹوئٹر نے ایک بلاگ پوسٹ میں کہا کہ جب بھی ہمیں کسی فرد یا اس کے مقررکردہ نمائندے کی طرف سے یہ اطلاع دی جائے گی کہ اس کی ذاتی تصویر یا وڈیو کو اس کی اجازت کے بغیر شیئر کیا گیا ہے تو ہم اسے ہٹا دیں گے۔

Sharing images is an important part of folks' experience on Twitter. People should have a choice in determining whether or not a photo is shared publicly. To that end we are expanding the scope of our Private Information Policy. 🧵

— Twitter Safety (@TwitterSafety) November 30, 2021

اپنی نیٹ ورک پالیسیوں کو سخت کرتے ہوئے ٹوئٹر نے یہ قدم بھارتی نژاد نئے سی ای او کی تقرری کے ایک روز بعد اٹھایا ہے۔ نئے ضابطوں کے مطابق کوئی شخص ٹوئٹر کو ایسی تصاویر یا وڈیوز ہٹانے کے لیے کہہ سکتا ہے جو اس کی مرضی کے بغیر پوسٹ کی گئی ہوں۔

کمپنی کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ تصویروں کو شیئر کرنے کے حوالے سے ٹوئٹر کی اس پالیسی کا اطلاق عوامی شخصیات یا ان افراد پر نہیں ہوگا جنہیں عوامی مفاد میں ٹوئیٹ کے متن کے ساتھ شیئر کیا گیا ہو۔

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More