مقبول بٹ کی برسی پر بھارتی کشمیر میں ہڑتال

وائس آف امریکہ اردو  |  Feb 11, 2020

سرینگر — 

بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر کے قوم پرست رہنما مقبول بٹ کی برسی پر منگل کو وادی میں مکمل ہڑتال رہی۔ وادی میں کاروبار زندگی معطل رہا جب کہ سیکیورٹی کے بھی انتہائی سخت انتظامات کیے گئے تھے۔

انتظامیہ کی ہدایت پر لگ بھگ تمام ٹیلی کام کمپنیوں نے پہلے سے ہی سست رفتار انٹرنیٹ سروسز کو پورا دن بند معطل رکھا۔

حکام کے مطابق یہ اقدامات امن و امان کو درپیش خدشات کے پیشِ نظر کیے گئے۔ وادی میں پانچ اگست کے بعد بند ہونے والی انٹرنیٹ سروسز کے ٹو-جی نیٹ ورک کو حال ہی میں بحال کیا گیا تھا۔

وادی میں ہڑتال کی کال کشمیر میں استصوابِ رائے کا مطالبہ کرنے میں پیش پیش تنظیموں آل پارٹیز حریت کانفرنس اور جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ (جے کے ایل ایف) نے دی تھی۔

سرینگر میں وائس آف امریکہ کے نمائندے یوسف جمیل کے مطابق ہڑتال کے باعث سرینگر اور وادی کے بیشتر شہروں میں دکانیں اور کاروباری مراکز بند رہے جب کہ ٹرانسپورٹ بھی جزوی طور پر بند رہی۔

البتہ بعض مقامات پر اشیائے خورونوش فروخت کرنے والی دُکانیں کھلی رہیں۔ لیکن سیکیورٹی وجوہات کی بناء پر وادی میں ٹرین سروس معطل رکھی گئی۔

خیال رہے کہ قوم پرست رہنما مقبول بٹ کو 11 فروری 1984 کو نئی دہلی کی تہاڑ جیل میں پھانسی دے دی گئی تھی۔ اُن پر 1960 کی دہائی کے دوران سوپور میں حساس ادارے کے افسر امرچند کو قتل کرنے کے الزام میں مقدمہ چلایا گیا تھا۔ جس کے بعد جرم ثابت ہونے پر اُنہیں پھانسی دی گئی۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More