کورونا وائرس: آکسفورڈ ویکسین ٹرائل کے نتائج حوصلہ افزا

بی بی سی اردو  |  Jul 20, 2020

آکسفورڈ یونیورسٹی کی طرف سے بنائی گئی کورونا وائرس کی ویکسین کے ابتدائی نتائج آ گئے ہیں اور یہ بظاہر محفوظ ہے اور مدافعت کے نظام کو بیماری کا مقابلہ کرنے کے قابل بناتی ہوئی نظر آ رہی ہے۔

اس کا تجربہ 1077 افراد پر کیا گیا اور انھیں انجیکشن لگائے گئے تاکہ وہ اپنے جسم میں اینٹی باڈیز اور وائٹ بلڈ سیل بنائیں جو کورونا وائرس کا مقابلہ کر سکیں۔

اس تحقیق کے نتائج نہایت امید افزا ہیں، لیکن ابھی یہ کہنا قبل از وقت ہو گا کہ یہ اس بیماری سے تحفظ فراہم کرنے کے لیے کافی ہے اور اس کے لیے بڑے پیمانے پر ٹرائل ضروری ہیں۔

برطانیہ نے پہلے ہی دوائی کی ایک کروڑ خوراکیں آرڈر کر دی ہیں۔

بی بی سی کے صحت کے نامہ نگار جیمز گیلیگھر کا کہنا ہے کہ ان ٹرائلز کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ یہ زیادہ افراد کو محفوظ طریقے سے دی جا سکتی ہے۔

لیکن ہو سکتا ہے کہ ہمیں 'جیب' (jab) کی وجہ سے مدافعت کے نظام کا ردِ عمل بھی پتہ چلے کہ آیا اس کی وجہ سے اینٹی باڈیز بنتی ہیں یا یہ مدافعت کے نظام کے دوسرے حصوں کو متحرک کرتا ہے۔

آج جو ہمیں نہیں پتہ چلے گا وہ یہ ہے کہ کیا یہ ویکسین 'کام' کرتی ہے، مطلب یہ کہ کیا اس سے آپ انفیکشن سے بچتے ہیں یا یہ کم از کم علامات کو کم کرتی ہے۔

اس کے لیے ٹرائلز میں بہت زیادہ افراد کو شامل کرنے کی ضرورت ہے اور ان ممالک میں بھی جہاں برطانیہ سے کہیں زیادہ کورونا وائرس کے متاثرین موجود ہیں۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More