حکومت ڈسکہ الیکشن میں غنڈہ گردی و چور ہتھکنڈوں سے باز رہے ،حمزہ شہباز

روزنامہ اوصاف  |  Apr 09, 2021

اسلام آباد(روزنامہ اوصاف)پاکستان مسلم لیگ (ن) کے نائب صدر اور پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز نے کہا ہے کہ ڈسکہ الیکشن میں ووٹ چوری، دھاندلی میں ملوث سرکاری افسران کے خلاف فوجداری قانون کے تحت کارروائی کریں گے،پارٹی نے فیصلہ کیا ہے کہ جو بھی عوام کے مینڈیٹ پر شب خون مارے گا، اسے قانون کے کٹہرے میں کھڑا کریں گے ۔اپنے ایک بیان میں حمزہ شہباز نے کہاکہ ڈسکہ میں الیکشن کی ذمہ داری پر مامور افسران اور عملہ آئین اور قانون کے مطابق شفاف انتخاب کو یقینی بنائے، ڈسکہ میں الیکشن ڈیوٹی پر تعینات افسران اور عملہ ڈسکہ کے عوام اور ووٹ کی حفاظت یقینی بنائے ، دھاندلی کرانے کاحکومتی حکم ملے تو الیکشن ڈیوٹی پر مامور افسران اور عملہ اسے ماننے سے انکار کردے ،انتخابی ووٹ اور ڈبے کے ساتھ کھلواڑ عوام اور پاکستان کے ساتھ کھلواڑ کے مترادف ہوگا،الیکشن کمشن سے درخواست ہے کہ کاونٹر فائلز کی کڑی نگرانی کی جائے ،الیکشن کمشن کا عملہ یقینی بنائے کہ کاونٹر فائلز ووٹ کی پرچی کے سیریل نمبر کے ساتھ میچ ہو ۔انہوں نے کہاکہ میں خبردار کرتا ہوں کہ عوام ایسی کسی بھی کوشش کی سخت مزاحمت کریں گے،یہ صرف ڈسکہ کا نہیں ،پورے پاکستان کا الیکشن ہے، ووٹ چوروں کی شکست ان کی اقتدار سے روانگی کا ذریعہ بنے گی ،انشاءاللہ 10 اپریل کوایک بارپھر ڈسکہ کے عوام کی فتح کا سورج طلوع ہوگا،عوام ووٹ کے ذریعے مہنگائی، بے روزگاری کا ظلم ڈھانے والے لٹیرے حکمرانوں کو مسترد کرے،ڈسکہ کے عوام کا ہر ووٹ کشمیر فروش، آٹا، چینی، بجلی، گیس، دوائی چور کرپٹ ٹولے سے نجات کا باعث بنے گا ،ڈسکہ کے عوام نے ثابت کردیا کہ وہ بیدار، خبردار اور ووٹ کی عزت کے رکھوالے ہیں ۔ہر شہری، مسلم لیگ (ن) کا ہر کارکن اور سپورٹر ووٹ کا پہرہ دے گا۔انہوں نے کہاکہ حکومت غنڈہ گردی، غیرقانونی اور چور ہتھکنڈے استعمال کرنے سے باز رہے ،پورا یقین اور اعتماد ہے کہ ڈسکہ کے عوام ایک بار پھر پاکستان مسلم لیگ (ن) کوووٹ دے کر پاکستان کی ترقی، خوشحالی اور روشن مستقبل پر مہر لگائیں گے
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More