چین کا ہائپرسونک میزائل تجربہ اہم واقعہ اور نہایت تشویشناک: امریکہ

اردو نیوز  |  Oct 28, 2021

امریکی محکمہ دفاع پینٹاگون کے ایک اعلیٰ جنرل نے کہا ہے کہ چین کا زمین کے گرد چکر لگانے والے ہائپرسونک میزائل کا حالیہ تجربہ سوویت یونین کے 1957 میں دنیا کے پہلے سیٹلائٹ سپوتنک کے شاندار لانچ کے مترادف تھا، جس نے سپر پاورز کے درمیان خلائی دوڑ کو جنم دیا۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق بدھ کو جوائنٹ چیفس آف سٹاف کے چیئرمین جنرل مارک ملی نے پہلی بار چین کے جوہری صلاحیت کے حامل میزائل کے تجربے کی تصدیق کی ہے جس کا دفاع کرنا بہت مشکل ہوگا۔

انہوں نے بلومبرگ ٹی وی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 'ہم نے جو دیکھا وہ ہائپرسونک ہتھیاروں کے نظام کے ٹیسٹ کا ایک بہت اہم واقعہ تھا۔ اور یہ بہت تشویشناک ہے۔'

جنرل مارک ملی کا کہنا تھا کہ 'مجھے نہیں معلوم کہ یہ ایک سپوتنک لمحہ ہے، لیکن مجھے لگتا ہے کہ یہ اس کے بہت قریب ہے۔'

'یہ ایک نہائیت اہم تکنیکی واقعہ ہے جو پیش آیا اور اس پر ہماری تمام تر توجہ ہے۔'

امریکی محکمہ دفاع نے پہلے اس ٹیسٹ کی تصدیق کرنے سے انکار کر دیا تھا، جس کی اطلاع پہلی بار 16 اکتوبر کو فنانشل ٹائمز نے دی تھی۔

اخبار نے کہا کہ اگست کے ٹیسٹ لانچ نے واشنگٹن کو حیران کر دیا۔

فنانشل ٹائمز کے مطابق میزائل نے نچلی پرواز کرتے ہوئے آواز سے پانچ گنا زیادہ رفتار سے زمین کے گرد چکر لگایا، لیکن وہ اپنا ہدف مکمل نہ کر سکا۔

چین نے اس رپورٹ کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ یہ دوبارہ قابل استعمال خلائی جہاز کے معمول کا ٹیسٹ ہے۔

چین 2019 میں ایک ہائپرسونک میڈیم رینج میزائل DF-17 کو سامنے لایا تھا۔ (فوٹو: ژنہوا)ہائپرسونکس میزائل ٹیکنالوجی کا ایک نیا افق ہے، کیونکہ یہ نچلی پرواز کرتے ہیں اور اسی لیے بیلسٹک میزائلوں کے مقابلے میں ان کا پتہ لگانا مشکل ہے۔

 یہ زیادہ تیزی سے اہداف تک پہنچ سکتے ہیں اور یہ انہیں زیادہ خطرناک بناتا ہے، خاص طور پر اگر ان پر جوہری وار ہیڈز نصب ہوں۔

امریکہ، روس، چین اور شمالی کوریا نے ہائپرسونکس کا تجربہ کیا ہے اور کئی دیگر ممالک یہ ٹیکنالوجی تیار کر رہے ہیں۔

چین 2019 میں ایک ہائپرسونک میڈیم رینج میزائل DF-17 کو سامنے لایا تھا جو تقریباً دو ہزار کلومیٹر کا فاصلہ طے کر سکتا ہے اور جوہری وار ہیڈ لے جا سکتا ہے۔

تاہم فنانشل ٹائمز کی خبر میں جس میزائل کا ذکر کیا گیا ہے وہ مختلف ہے اور اس کی رینج زیادہ ہے۔ اسے اپنے ہدف کو نشانہ بنانے کے لیے فضا میں واپس آنے سے پہلے مدار میں چھوڑا جا سکتا ہے۔

بدھ کو چین کے میزائل تجربے کے بارے میں پوچھے جانے پر پینٹاگون کے ترجمان جان کربی نے دوبارہ اس کی تصدیق کرنے سے انکار کر دیا۔

لیکن انہوں نے کہا کہ چین کی فوجی صلاحیتوں میں کوئی بھی بڑی پیش رفت 'خطے اور اس سے باہر کشیدگی کو کم کرنے میں بہت کم مدد کرتی ہے۔'

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More