موبائل سے نفرت ہے، رضوان نے فون استعمال نہ کرنے کی وجہ بتادی

بول نیوز  |  Jan 14, 2022

قومی ٹیم کے وکٹ کیپر بلے باز محمد رضوان کا کہنا ہے کہ موبائل سے بالکل لگاؤ نہیں اور ٹور پر میچ پر زیادہ فوکس کرنے کی وجہ سے موبائل بہت کم استعمال کرتا ہوں۔

ایک انٹریو میں قومی ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کے نائب کپتان محمد رضوان نے کہا کہ ابتدا میں مجھے ٹنڈولکر بہت پسند تھا لیکن اب اے بی ڈی ویلیئرز میرا پسندیدہ کھلاڑی ہے جب کہ ویرات کوہلی کی کیا بات کروں ، وہ تو پوری دنیا کا پسندیدہ کھلاڑی ہے لیکن وہ بڑا کھلاڑی ہونے کے ساتھ ساتھ ایک بہترین انسان بھی ہے۔

آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ کی کارکردگی پر بات کرتے ہوئے محمد رضوان نے کہا کہ سیمی فائنل ہارنے کے باوجود جس طرح پوری دنیا سے پاکستانیوں نے ہمیں پیار دیا اور کہا کہ جس دن آپ لوگوں نے بھارت کو ہرایا بس آپ ورلڈکپ جیت گئے تھے۔

میزبان کی جانب سے محمد رضوان کی ویرات کوہلی کے ساتھ وائرل ہونے والی تصاویر سے متعلق سوال پوچھا گیا جس پر محمد رضوان نے جواب دیا کہ میچ کے دوران جس طرح ہر ٹیم کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ مخالف بلے باز کو پریشان کرے بس ویرات کوہلی بھی وہی کررہا تھا لیکن میچ کے اختتام پر اس نے مجھے گلے لگا کر شاباشی دی۔

ویرات کوہلی، روہت شرما اور جوز بٹلر جیسے کھلاڑیوں سے موازنے سے متعلق سوال کے جواب میں وکٹ کیپر بلے باز نے کہا کہ اتنی دور کی تو میں نے کبھی نہیں سوچی ، میں صرف میچ کے دوران اپنا بہترین کھیل پیش کرنے کی کوشش کرتا ہوں اور تمام کھلاڑیوں سے کچھ نہ کچھ سیکھنے کی کوشش کرتا رہتا ہوں۔

میں وکٹ کیپر بلے باز ہوں اور بابراعظم سمیت کسی بھی کھلاڑی سے میرا کوئی موازنہ نہیں کیوں کہ وہ ایک مکمل بلے باز ہیں لیکن میں وکٹ کیپر بیٹسمین ہوں مجھے بیٹنگ کے ساتھ ساتھ وکٹ کیپنگ پر بھی توجہ دینی ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا میں بطور کرکٹر کسی کو فالو نہیں کرتا البتہ بہت سے لوگوں سے بہت کچھ سیکھا ہوا ہے اور وہ اپنی بیٹنگ میں کرکے بھی دکھانے کی کوشش کرتا ہوں۔

محمد رضوان نے کہا کہ جو لوگ مجھے فون کرنے کی کوشش کرتے ہیں یا پھر موبائل پر پیغامات بھیجتے ہیں ان سے معذرت چاہتا ہوں کہ جواب نہیں دیتا اور نہ ہی کبھی دوں گا کیوں کہ میں موبائل استعمال ہی نہیں کرتا اور نہ ہی مجھے موبائل سے کسی قسم کا لگاو ہے.

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More