توہین عدالت کیس، عمران خان کی معافی تسلی بخش ہے: اسلام آباد ہائی کورٹ

اردو نیوز  |  Sep 22, 2022

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وزیراعظم عمران خان کے خلاف توہین عدالت کیس کا تحریری حکم نامہ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’بادی النظر میں عمران خان کی معافی تسلی بخش ہے۔‘

جمعرات کو عدالت عالیہ کے پانچ رکنی بینچ نے تحریری حکم نامے میں کہا کہ ’سابق وزیراعظم عمران خان کو اگلی سماعت تک بیان حلفی جمع کرنے کا موقع دیا جاتا ہے، بادی النظر ہم ان کی معافی سے مطمئن ہیں۔‘

عدالت نے اپنے حکم نامے میں لکھا کہ ’سابق وزیراعظم عمران خان نے عدالت کو بتایا کہ انہوں نے 26 برس قانون کی بالادستی کی جنگ لڑی ہے، وہ عدلیہ کی آزادی پر یقین رکھتے ہیں اور ان کے علاوہ کوئی سیاسی لیڈر اپنے جلسوں میں قانون کی بالادستی کی بات نہیں کرتا۔‘

حکم نامے کے مطابق ’عمران خان نے عدالت کو بتایا کہ کیس کی سماعت کے دوران انہیں احساس ہوا ہے کہ انہوں نے شاید ریڈ لائن کراس کی ہے۔ ان کا مقصد کبھی بھی ماتحت عدلیہ کے جج کو دھمکانہ نہیں تھا اور ان کے بیان کا مطلب قانونی کارروائی کرنا تھا۔‘

عدالتی حکمنامے میں لکھا ہے کہ ’عمران خان نے کہا کہ وہ ڈسٹرکٹ جج کو یقین دلانا چاہتے ہیں کہ نہ انہوں نے نہ ہی پارٹی نے ان کے خلاف کوئی کارروائی کی، اور اگر وہ سمجھتی ہیں کہ ریڈ لائن کراس ہوئی ہے تو وہ ان کے سامنے پیش ہو کر معافی مانگنے کو تیار ہیں۔‘

عمران خان نے عدالت کو یقین دہانی کروائی کہ وہ آئندہ کبھی ایسا اقدام نہیں کریں گے جس سے عدلیہ خصوصا ڈسٹرکٹ ججز کی تکریم کو نقصان پہنچے۔ عمران خان نے عدالت کو یقین دلایا کہ وہ پر وہ قدم اٹھانے کے لیے تیار ہیں جس سے عدالت مطمئن ہو۔ 

پانچ رکنی عدالتی بینچ کے سربراہ چیف جسٹس اطہر من اللہ نے تحریری حکمنامہ جاری کیا۔ فائل فوٹو: اسلام آباد ہائیکورٹقبل ازیں جمعرات کی دوپہر اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم عمران خان کے خلاف توہین عدالت کیس میں خاتون جج سے معافی مانگنے کی پیشکش پر فرد جرم عائد کرنے کی کارروائی موخر کر دی تھی۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ اطہر من اللہ کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے عمران خان کے خاتون جج سے معافی مانگنے کی پیشکش پر انہیں بیان حلفی جمع کروانے کی ہدایت کی تھی۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More